- الإعلانات -

نیازی صاحب 18ویں ترمیم کے حوالے سے میں آپ کے خیالات سے 100فیصد متفق ہوں

18ویں ترمیم کو ختم نہیں اس کی شقوں میں ترمیم کی ضرورت ہے،سینیٹر علی ظفر

دنیا میں کہیں بھی بجٹ پیش کیا جائے اس میں کمزوریاں رہ جاتی ہیں ، ہماری کوشش ہے عوام کو زیادہ سے زیادہ سہولیات دیں

18ویں ترمیم کے حوالے سے بھی بات چیت کا ہونا بہت ضروری اور یہ وقت کا تقاضا بھی ہے،سچی بات کے دوران گفتگو

اسلام آباد (روزنیوزرپورٹ)روزنیوز نے پروگرام ’’ سچی بات‘‘ میں گفتگو کرتے ہوئے سینیٹر علی ظفر نے کہا کہ اس وقت بجٹ کی بات چل رہی ہے پارلیمنٹرین کیلئے ضروری ہے کہ وہ اس پر بات کریں ، جو چیزیں ہیں ان کی نشاندہی کریں کیونکہ یہ لوگ عوام کی نمائندگی کرتے ہیں ، جہاں ایشو نظر آئے اس پر رائے دینی چاہئے ، مقصد یہ نہیں ہونا چاہئے کہ صرف ایک دوسرے کو نشانہ بنایا جائے ، انہوں نے کہا کہ زراعت میں ترقی ہوئی ہے ، ذخیرہ اندوزوں کیخلاف بھی قانون سازی کی گئی ہے ، اس کو ختم کرنے جار ہے ہیں ، علی ظفر نے کہا کہ مجھے بطور سینیٹ ایک اہم ذمہ داری تفویض کی گئی ہے، چیئرمین لاء اینڈ جسٹس کمیشن بنایا گیا ہے ، یہ کمیشن سینیٹ کی روح ہوتا ہے اس کا کام ہے کہ وہ دیکھے قانون پر کہاں تک عمل ہو رہا ہے، میرے کمیشن میں بہت اہم اور لائق لوگ ہیں ، آپ آنے والے دنوں میں دیکھیں گے کہ اس کے اثرات سامنے نظر آئیں گے ، انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ فوج کی تنخواہوں کے حوالے سے شہباز شریف نے پوائنٹ سکورنگ کی ہے ، دفاعی بجٹ اہم ہوتا ہے ، ہماری معیشت کی گروتھ بہتر ہوگی تو دفاعی بجٹ بھی بہتر ہو گا، ماضی میں یہ لوگ دفاعی بجٹ کو کم کرنے کا کہتے تھے ، شہباز شریف جیسی باتیں آپ کسی بھی ماہر معاشیات کے سامنے رکھیں وہ اتفاق نہی کریں ، جیو پولیٹکل حالات کے پیش نظر دفاعی بجٹ بہت ضروری ہے ، ہمارا پڑوسی ملک ایسی چیزیں خرید رہا ہے جو کہ بہت مہنگی ہیں ،اس بجٹ میں نچلی سطح پر عوا م کیلئے سہولیات فراہم کی گئی ہیں ، کیونکہ یہ بہت ضروری تھا جب غریب آدمی ترقی کے گا گروتھ ریٹ پر توجہ دی جائے گی تو حالات بہتر ہونگے ، نیازی صاحب آپ نے 18ویں ترمیم کے حوالے سے جو کہا وہ بالکل درست ہے میں اس سے اتفاق کرتا ہوں ، میں بھی کمیٹی میں اس حوالے سے دیکھوں گا کہ 18ویں ترمیم پر بات کی جائے ، کیونکہ اس ترمیم کی وجہ سے بہت سے ایسے اختیارات ہیں جو صوبوں کے پاس چلے گئے، انہیں نہیں جانا چاہئے تھا، 18ویں ترمیم کو ختم نہیں اس میں امپروومنٹ کی ضرورت ہے ، اسے بہتر بنایا جا سکتا ہے ، اپوزیشن کہتی ہے کہ صوبائی معیشت کو ختم کیا جا رہا ہے تو یہ تنقید بھی مناسب نہیں ، دنیا میں کہیں بھی کوئی بھی بجٹ پیش کیا جائے کوئی نہ کوئی اس میں کمزوریاں رہتی ہیں ، ہماری کوشش ہے کہ عوام کو زیادہ سے زیادہ سہولیات دیں ، 18ویں ترمیم کے حوالے سے بھی بات چیت کا ہونا بہت ضروری ہے اور یہ وقت کا تقاضا بھی ہے ۔