- الإعلانات -

اپوزیشن ڈپٹی اسپیکر کے خلاف تحریک عدم اعتماد واپس لینے پر تیار

اسلام آباد : اپوزیشن ڈپٹی اسپیکر کے خلاف تحریک عدم اعتماد واپس لینے پر تیار ہوگئی اور بجٹ اجلاس میں ہنگامہ آرائی کے معاملے پر حکومت اور اپوزیشن کے درمیان کمیٹی کے قیام پر اتفاق کرلیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق قومی اسمبلی کے بجٹ اجلاس میں ہنگامہ آرائی اور احتجاج کے معاملے پر حکومت اور اپوزیشن کے درمیان معاملات طے پاگئے، حکومت اوراپوزیشن کےدرمیان کمیٹی کے قیام پر اتفاق کرلیا گیا، جس کے بعد اپوزیشن ڈپٹی اسپیکرکےخلاف تحریک عدم اعتمادواپس لینے پرتیار ہوگئی۔راجہ پرویزاشرف نے کہا حکومت نے ایجنڈا بلڈوز کرکےجوقانون سازی کی وہ واپس ہو گی، کمیٹی اس قانون سازی کا جائزہ لے گی۔اس سے قبل وزیر دفاع پرویز خٹک نے کہا تھا کہ قومی اسمبلی اجلاس کیلئےکمیٹی بنانے کی سفارش ہوئی ہے، اچھی میٹنگ ہوئی کوشش ہے قومی اسمبلی کا اجلاس خوش اسلوبی سے چلے،جو کچھ قومی اسمبلی میں ہوا ہم سب اسکی مذمت کرتے ہیں، ہم چاہتے ہیں اسپیکر کوبااختیار کیاجائے ،اتفاق ہوا ہے گالی گلوچ ، شور شرابہ نہ کیا جائے، فیصلہ ہواہے اراکین اپنی نشستوں سے نہ اٹھیں۔

دوسری جانب وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ رانا ثنا، ایاز صادق ، شازیہ مری اور پرویز اشرف سے گفتگو ہوئی ، اسمبلی میں ہنگامہ آرائی سے پارلیمان کی سبکی ہوئی ، حکومت اور اپوزیشن اراکین پر مشتمل کمیٹی بنائی جارہی ہے ، پارٹی لیڈران اپنے اراکین کو کنٹرول کریں۔فواد چوہدری نے اپوزیشن سے درخواست کی ڈپٹی اسپیکر کیخلاف عدم اعتماد کی قرارداد واپس لیں ، امید ہے اپوزیشن کاپارٹی لیڈران سے بات کے بعد مثبت جواب آئیگا ، حکومت اور اپوزیشن میں پارلیمنٹ کو بہتر انداز میں چلانے کے لئے معاہدہ ہوگیا ہے۔یاد رہے اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے اپوزیشن رہنماؤں سے ملاقات کی ،ملاقات میں ن لیگ نے رانا ثنا اللہ اور سردار ایاز صادق ، رانا تنویر اور مولانا اسعد محمود شامل تھے، جس میں اسپیکر نے ایوان کو خوشگوارماحول میں چلانے کے لیے تعاون کرنے کی درخواست کی تھی۔اپوزیشن رہنماؤں نے اسپیکر اسدقیصر سے شکوہ کیا تھا کہ آپ کا رویہ جانبدارانہ ہے، ایوان کو چلانا حکومت کی ذمہ داری ہوتی ہے، حکومت کا رویہ افسوسناک ہے۔