- الإعلانات -

کوئٹہ میں دہشت گردی،68 افراد جاں بحق،40سے زائد زخمی

وزیر اعلیٰ بلوچستان ثناء اللہ زہری کا کہنا ہے کہ دھماکا خود کش تھا۔ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ بلوچستان میں دہشت گردی میں را ملوث ہے،دہشت گرد آسان ہدف کو نشانہ بنا رہے ہیں ،ان کے سامنے نہیں جھکیں گے،وہ جہاں بھی ہوں گے انہیں کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا۔

کوئٹہ کے سول اسپتال کے شعبہ حادثات کے بیرونی گیٹ پر دھما کے اور فائرنگ میںجاں بحق ہونے والوں میں وکلا کی تعداد زیادہ ہے ۔ شہر کے تمام اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی۔افسو ناک واقعات کے بعد پولیس کی نفری سول اسپتال طلب کر لی گئی۔

پیر کی صبح منو جان روڈ پر بلوچستان بار کے صدر بلال انور کاسی کی گاڑی پر نامعلوم افراد کی طرف سے فائرنگ کی گئی جس کے نتیجے میں وہ جاں بحق ہوگئے ۔بلال انور کاسی کی میت سول اسپتال پہنچائی گئی تو وہاں ایک بار پھر دہشت گردوں نے اپنا وار کیا۔ اسپتال کے شعبہ حادثات کے بیرونی گیٹ پر جہاں وکیلوں کی بڑی تعداد جمع تھی ، ایک زوردار دھماکا ہوا، دھماکے کے بعد فائرنگ بھی ہوئی۔دھماکے میںتقریباً آٹھ کلو گرام بارودی مواد استعمال کیا گیااور بال بیئرنگ بھی استعمال کیے گئے۔

دھماکے کے نتیجے میں68 افراد جاں بحق اور 40سے زائد زخمی ہوگئے، جاں بحق ہونے والوں میں بلوچستان بار کے سابق صدر بازمحمد کاکڑ سمیت بڑی تعداد میں وکلا اورآج ٹی وی کا کیمرا مین بھی شامل ہے۔

دھماکےسےاسپتال میں بھگدڑ مچ گئی۔ لوگ اپنی جان بچانے کے لئے بھاگتے نظر آئے ۔زخمیوں کو فوری طور پر طبی امداد دی گئی اور شدید زخمیوں کو سی ایم ایچ منتقل کردیا گیا ۔ اسپتال کےباہر رقت آمیز مناظر ہیں،لوگ اپنے پیاروں کو تلاش کرتے رہے۔

آرمی چیف جنرل راحیل شریف کوئٹہ کے سول اسپتال پہنچ گئے اور کمانڈر سدرن کمانڈ لیفٹیننٹ جنرل عامر ریاض اور سینئر فوجی حکام ہمراہ سول اسپتال کا دورہ کیا اور دھماکے کے زخمیوں کی عیادت کی ۔ آرمی چیف کو واقعے پر بریفنگ بھی دی جائے گی ۔

وزیراعظم نوازشریف بھی کوئٹہ کیلئے روانہ ہوگئے ہیں۔وزیراعظم نوازشریف کوئٹہ خودکش حملے کے زخمیوں کی عیادت کریں گے ۔

صوبہ بلوچستان کا دارالحکومت کوئٹہ ایک عرصے سے امن دشمنوں کے نشانے پر ہے،کوئٹہ میں سیکورٹی فورسز اور پولیس اہلکاروں کی بڑی تعداد دہشت گرد حملوں میں جان گنواچکی ہے ۔ڈاکٹرز ، صحافیوں ، اساتذہ سمیت شہر کی سول سوسائٹی کی بڑی تعداد دہشت گردی کا شکار ہوچکی ہےلیکن اس بار شہر میں دہشت گردی کی تازہ لہر میں دہشت گردوں نے کوئٹہ کی وکلاء برادری کو نشانہ بنایا ۔

وہی تاریخ، وہی مہینہ ،وہی شہر،وہی طریقہ واردات۔۔ آج ہونےوالی دہشت گردی کے واقعے میں وہی طریقہ واردات اپنایا گیا جو آٹھ اگست ،دوہزار تیرہ کوہوئے دھماکے میں اختیارکیاگیاتھا۔

کوئٹہ میں دہشت گردوں نے آج سے تین سال قبل ایک پولیس افسر کوہلاک کیا۔پھراس کی نمازجنازہ میں آئےافسران اور اہلکاروں کو خودکش حملے میں شہید کیاگیا۔8 اگست2013 کو ہونے والے اس دھماکے میں ڈی آئی جی فیاض سنبل ،ڈی ایس پی شمس الدین اور ایس پی علی مہر سمیت 30سے زائداہلکار شہیدہوئے تھے۔

جنوری2013میں علمدردارروڈکوئٹہ پر پہلے ایک دکان میں دستی بم پھینکا گیا ۔ دھماکے کے بعد موقع پر بڑی تعدادمیں لوگ اکٹھاہوگئے۔ ابھی امدادی کارروائیاں جاری تھیں کہ دہشت گردوں نے دوسرا بڑا دھماکا کرکے سب کچھ تہس نہس کردیا۔ دونوں دھماکوں میں تقریبا سوافرادجاں بحق ہوگئے تھے۔

وزیراعلی بلوچستان کہتےہیں دھماکےمیں ملوث افراد کو نہیں چھوڑا جائےگا،دہشت گردوں کو کیفرکردارتک پہنچایاجائےگا۔ترجمان بلوچستان حکومت کا کہنا ہے کہ دہشت گرد اپنا وجود ثابت کرنے کیلئے ایسی کارروائیاں کررہے ہیں،صوبائی حکومت نے تین روزہ سوگ کا اعلان کردیا ،سپریم کورٹ بار نےبھی ملک بھر میں سوگ کا اعلان کیا ہے۔

سانحہ کوئٹہ کے خلاف ملک کے چھوٹے بڑے شہروں میں وکلاء نے عدالتی امورکابائیکاٹ کردیا جبکہ کل وکلا یوم سوگ منائیں گے۔پاکستان بار کونسل کا 3روزہ سوگ کا اعلان کر دیا،سوگ کااعلان ممبر پاکستان بار کونسل چودھری اشتیاق احمد خان نےکیا۔

ملتان میں کوئٹہ میں دہشت گردی کے واقعے کے بعد ہائی کورٹ میں وکلا نے احتجاجا کام چھوڑ دیا ، صدر ہائی کورٹ بار کے مطابق کل وکلا یوم سوگ منائیں گے اور عدالتوں کا مکمل بائیکاٹ کیا جائے گا،گوجرانوالہ بار کونسل اور سرگودھا میں بھی وکلاء کل ہڑتال کریں گے۔

حیدرآباد میں سندھ ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کی اپیل اور سکھر میں وکلاء کی جانب سے عدالتی کارروائیاں معطل کردیا جبکہ سیشن کورٹ کے احاطے میں احتجاجی مظاہرہ کیا، مظفرآباد میں سینٹرل بارایسوسی ایشن کی جانب سے تین روزہ سوگ کا اعلان کرتے ہوئے ،عدالتی امورمعطل کردئیے۔ گلگت میں بھی وکلاء نے عدالتی امور معطل کردیئے۔

ادھر چمن میں کوئٹہ بم دہماکے کے سوگ میں شہر بھر میں دکانیں مارکیٹ اور بازار بند ہوگئے جبکہ عوامی نیشنل پارٹی کی اپیل پر شہر میں تین روزہ سوگ کا اعلان کیا گیا ہے ۔