- الإعلانات -

پاکستان کی معیشت بہت تیزی سے بہتری کی طرف جارہی ہے

وزیر اعظم نے کہا کہ پاکستان کی معیشت بہت تیزی سے بہتری کی طرف جارہی ہے،کاشتکار بھی ملک میں خوشحالی کا مقام حاصل کرسکے گا،تین سال پہلے ملک میں لوڈشیڈنگ کا مسئلہ عروج پر تھا ،ملک میں کھاد کی قیمت کو کم کیا گیا ہے ،ہم نے ہر طبقے کی خدمت کی ہے۔تین سال قبل سفر شروع کیا تو راستے ہی نہیں تھے ملک میں بجلی کی صورتحال روز بروز بہتر ہورہی ہے ۔شورکوٹ آکر بہت خوشی ہورہی ہے۔

وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ پاکستانی قوم نے امید کی دنیا میں قدم رکھ دیا ہے، ملک میں سڑکوں کا جال بچھا رہے ہیں ،ترقی کا فائدہ پورے ملک کو پہنچ رہا ہے ،لوڈشیڈنگ کے مسئلے کو تیزی سے حل کررہے ہیں ۔ ہمارے منصوبے دشمنوں کو نہیں بھاتے،سیاست عبادت کا درجہ رکھتی ہے،کنٹینر پر چڑھ کر سنجیدہ سیاست نہیں ہوتی۔

وزیراعظم نواز شریف شورکوٹ میں ایم فور کے شورکوٹ تاخانیوال سیکشن کےمنصوبے کا سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب سے خطاب کر رہے ہیں ،وزیر اعظم نے کہا کہ آج ہمارا روپیہ مستحکم ہوچکا ہے،دنیا بھر کے اخبارات میں پاکستان کی ترقی سے متعلق آرٹیکلز چھپ رہے ہیں۔یہ کہا جانے لگا تھاکہ پاکستان ایک ناکام ریاست ہے۔،آج دنیا پاکستان کی ترقی کی تصدیق کررہی ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ سڑکیں بنانا تو درکنار، ملک کو اندھیروں میں جھونک دیاگیا ،2018 تک پاکستان کو لوڈ شیدنگ سے پاک کر دیں گے ،17 سال میں اس موٹروے پر کوئی کام نہیں کیا گیا ،سوچنا چاہیے کہ کسی اور کو اس کا خیال کیوں نہیں آیا ۔ 1999 میں جب ہم گئے تھے تو بجلی وافر مقدار میںتھی ۔

انہوں نے کہا کہ ہم یہ اس لیے نہیں کررہے کہ 2018 کا الیکشن آرہا ہے،صرف الیکشن تک نہیں آئندہ 50سال کا سوچ رہے ہیں،جو تحریک چلانے کا کہہ رہے ہیں لوگ ان کا ساتھ نہیں دے رہے ،عوام ملک میں ترقی کی سیاست کا ساتھ دیں گے ،ان کی پوزیشن اسی لیے آج ڈاؤن ہے،یہ کوئی 5کا تماشا یا تفریح نہیں ،یہ ون ڈے یا 5 دن کا ٹیسٹ میچ نہیں ہے۔

وزیر اعظم نے مزید کہا کہ خنجراب سےمانسہرہ 600 کلومیٹر،مانسہرہ سےحسن ابدال 180 کلومیٹر کا منصوبہ جاری ہے، یہ نیٹ ورک گوادر کو کے پی کے سے ملائے گا ۔بلوچستان میں روڈز اور ہائی ویز کا ایک نیا نیٹ ورک بن رہاہے، میں سنگ بنیاد تب رکھوں گا جب کام شرورع ہوچکا ہوگا،ہمارے ملک میں سنگ بنیاد رکھ کر رہنما اسلام آباد چلے جاتے تھے۔3 منصوبوں میں ہم نے 100 ارب روپے کی بچت کی ہے جو ایک مثال ہے۔

انہوں نے کہا کہ حیدر آباد کراچی موٹر وے آئندہ سال مکمل کرلی جائے گی،ہم سے پہلے دو ارب اور 10 ارب کے منصوبے بھی نہیں ہوتے تھے ،پچھلے ڈیڑھ سال میں ساڑھے 8سو ارب روپے کے منصوبے شروع کیے ہیں ۔تاپی گیس کا منصوبہ ہماری گیس کی کمی پورا کرے گا ،ملتان سے بہاولپور کا کنکشن بھی فوری اور ساتھ ساتھ ہونا چاہیے،سندھ میں تھر کے مقام پر اور پورٹ قاسم میں بجلی کے کارخانے لگتے نظر آرہے ہیں۔

نواز شریف نے کہا کہ اللہ نے ہماری مدد کی ، بجلی کے کارخانے لگ رہے ہیں،چین کی شراکت سے جو منصوبے لگ رہے ہیں ان کی رفتار بہت تیز ہے،زرمبادلہ کے ذخائر اس وقت سب سے زیادہ ہیں ،3 منصوبوں میں ہم نے 100 ارب روپے کی بچت کی ہے جو ایک مثال ہے۔

انہوں نے کہا کہ موٹروے کا یہ سلسلہ گوادر تک جائے گا،1999 میں ہم نے لاہور سے اسلام آباد اور اسلام آباد سے پشاور موٹروے بنائی،چین کے سفیر بھی اس تقریب میں شرکت کیلیےتشریف لائے ہیں،چین ہمارا بہترین دوست ہے، جس کی مثال نہیں ملتی۔ پورے ملک کے حصوں کو ایک دوسرے سے جوڑا جائے گایہ سلسلہ چین کی سرحد سے شروع ہوتا ہے،انفرااسٹرکچر اور مواصلات کا سفر شروع کیا آج جس طرح لوڈشیڈنگ کے مسئلے پر کام ہورہا ہے وہ سب کے سامنے ہے ۔

انہوں نے کہا کہ ہم ان منصوبوں کو پایہ تکمیل تک پہنچائیں گے اس منصوبےمیں 4 ارب روپے کی بچت کی گئی ہے ،اس منصوبے کا تخمینہ 26 ارب روپے لگا تھا اور کنٹریکٹ 22 ارب میں ہوا،اللہ ان منصوبوں کو نظر بد سے بچائے،ہمارے یہ منصوبے دشمنوں کو نہیں بھاتے ،ہم نے عوام کا پیسا عوام کو واپس کیا ہے،گوادر میں پورٹ اسٹیٹ آف دی آرٹ بن رہی ہے ۔پاکستان کو موٹروے کے ذریعے وسطی ایشیا سے ملائیں گے ۔

خطاب سے قبل وزیراعظم نواز شریف نے فیصل آباد سے ملتان موٹروے ایم فور کے شورکوٹ تاخانیوال سیکشن کےمنصوبے کا سنگ بنیاد رکھا،240کلو میٹر فیصل آباد تا ملتان موٹروے 4 حصوں پر مشتمل ہے،ایک پر ٹریفک رواں دواں،ایک پر کام مکمل ہو گیا،دوسرے پر جاری ہے، کام دو برس میں مکمل ہوگا۔