- الإعلانات -

ہائی کورٹ کے حکم پر بچوں کے اغوا کی روک تھام کے لیے ہسپتالوں میں سی سی ٹی وی کیمرے نصب۔

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا میں پشاور ہائی کورٹ کے ایک حکم پر صوبے میں بچوں کے اغوا کی روک تھام کے لیے ہسپتالوں میں سی سی ٹی وی کیمرے نصب کر کے ان کی سیکیورٹی بڑھائی جا رہی ہے۔              پشاور ہائی کورٹ کے حکم پر لیڈی ریڈنگ ہسپتال کے صرف گائنی وارڈ میں 40 سی سی ٹی وی کیمرے نصب کیے جا چکے ہیں جبکہ ہسپتال کے اہلکار برائے تعلقات عامہ جمیل شاہ نے بی بی سی کو بتایا کہ اب تک کل 96 کیمرے نصب کیے جا چکے ہیں۔
انھوں نے کہا کہ صرف لیڈی ریڈنگ ہسپتال میں 160 کیمرے آئندہ چند ماہ میں تنصیب کر دیے جائیں گے ۔
شہر کے دیگر ہسپتالوں میں اعلیٰ معیار کے 700 سے زیادہ کیمرے نصب کیے جانے کا منصوبہ ہے۔
ان کیمروں کی تنصیب سے پشاور کے بڑے ہسپتالوں میں بچے شاید اب پہلے سے زیادہ محفوظ سمجھے جا رہے ہیں۔ ان کے اغوا یا بچوں کے رد و بدل کے واقعات کی روک تھام کے لیے اقدامات کیے گئے ہیں۔
لیڈی ریڈنگ ہسپتال کی انتظامیہ کے مطابق ابتدا میں کیمرے گائنی وارڈ، بچوں کے وارڈ نرسری، اور لیبر روم میں نصب کیے گئے ہیں تاکہ یہاں سے بچوں کی حفاظت کو یقینی بنایا جاسکے۔ اس کے بعد دیگر وارڈز اور دفاتر میں نصب بھی کیمرے کیے جائیں گے۔