- الإعلانات -

پلی بارگین معافی نہیں بلکہ تحقیقات آگے بڑھانے کا ہتھیار ہے، چیرمین نیب

اسلام آباد: چیرمین نیب قمر زمان چوہدری کا کہنا ہے کہ پلی بارگین کا مقصد ملزموں کی معافی نہیں بلکہ یہ تحقیقات آگے بڑھانے کا ہتھیار ہے۔

قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیرمین قمر زمان چوہدری نے ملک کے سب سے بڑے کرپشن کیس میں سابق سیکریٹری خزانہ بلوچستان مشتاق رئیسانی کی پلی بارگین درخواست پر وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ پلی بارگین کا مقصد ملزموں کی معافی نہیں بلکہ یہ تحقیقات آگے بڑھانے کا ہتھیار ہے، اس سزا میں ملزم صرف جیل نہیں جاتا جب کہ پلی بارگین کرنے والے پر سزا کے تمام لوازمات لاگو ہوتے ہیں۔

چیرمین نیب نے کہا کہ مشتاق رئیسانی کا کیس ابھی ختم نہیں ہوا، مشتاق رئیسانی اور سہیل مجید شاہ سے لوٹی ہوئی رقم برآمد کی جب کہ مرکزی ملزم خالد لانگو کے خلاف بھی ریفرنس تیار کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بلوچستان کرپشن کیس میں مجموعی طور پر 2 ارب 20 کروڑ کی کرپشن ہوئی اس لیے 40 ارب کی کرپشن کی خبر بے بنیاد ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ منتخب عوامی نمائندہ پلی بارگین کے بعد 10 سال کے لیے نااہل ہوجاتا ہے جب کہ سرکاری ملازم پلی بارگین کرے تو نوکری سے فارغ کردیا جاتا ہے۔

واضح رہے کہ نیب نے اربوں روپے کی کرپشن میں گرفتار سابق سیکریٹری خزانہ بلوچستان مشتاق رئیسانی کی 2 ارب روپے کی پلی بارگین درخواست منظور کی ہے جسے اپوزیشن رہنماؤں کی جانب سے شدید تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے جب کہ وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے بھی پلی بارگین کو فراڈ قرار دیا ہے۔