قومی

فواد چوہدری کیساتھ پی ٹی آئی نے جو کیا ہمیں کچھ کرنے کی ضرورت نہیں، خواجہ آصف

اسلام آباد: مسلم لیگ (ن) کے رہنما خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ فواد چوہدری کے ساتھ ان کی جماعت نے جو کیا اس کے بعد ہمیں کچھ کرنے کی ضرورت نہیں۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) کے رہنما خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ وفاقی وزیر فواد چوہدری میرے عزیز ہیں اور گزشتہ چھ دہائیوں سے اس ان کے ساتھ خاندانی تعلق ہے اور میں اس تعلق کی پاسداری کروں گا، فواد چوہدری کے ساتھ ان کی جماعت نے اور فواد چوہدری نے اپنی جماعت کے ساتھ جو کیا اس کے بعد ہمیں کرنے کی کچھ ضرورت نہیں۔ خواجہ آصف نے پنجابی میں جملہ کہا کہ  ’رل تے گئے ہیں پر چس وی نئیں آئی‘ (دربدر تو ہوگئے اور مزا بھی نہیں آیا) عزیز داری کا خیال ہے اس لیے لمبی بات نہیں کروں گا۔

خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ میثاق معیشت بہت اچھی بات ہے اور اصولی طور پر ہم اس کی حمایت کرتے ہیں، تاہم میثاق معیشت اپوزیشن اور حکومت نہیں سیاسی جماعتوں میں ہونا چاہیے،  ہماری جماعت کی جانب سے اگر یہ بات آئی ہے کہ یہ مذاق معیشت ہے تو یہ بات موجودہ حالات کے تناظر میں آئی ہے، حکومتی جماعت کے رہنما علی محمد خان میثاق معیشت کے حوالےسے پیغام لے کر آئے تھے، بجٹ سے پہلے ہم سے مشاورت کیوں نہیں کی گئی، ہم اس بجٹ کی مخالفت کررہے ہیں کیونکہ ہم سمجھتے ہیں کہ یہ عوام دشمن بجٹ ہے اور اس پر ہماری اپنی رائے اور تحفظات ہیں۔

کرپشن اور منی لانڈرنگ کرنیوالوں کو چوراہوں پر گھمانے کےبعد پھانسی دی جائے، فیصل واوڈا

اسلام آباد: وفاقی وزیر آبی وسائل فیصل واوڈا  نے کہا ہے کہ کرپشن اور منی لانڈرنگ کرنے والوں کو پہلے گاڑی کے پہیوں کے ساتھ چوراہوں میں گھمایا جائے پھر انہیں پھانسی دے دی جائے۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے فیصل واوڈا نے کہا کہ  ملکی خزانہ لوٹنے والے 5 ہزار آدمیوں کو لٹکانے کی بات پر قائم  ہوں حالانکہ میں نے یہ بات قانون کی حکمرانی قائم کرنے کے لیے کہی تاکہ پاکستان کی تقدیر بدل جائے لیکن اس بیان پر مجھے فاشسٹ کہا گیا، جن لوگوں نے مجھے فاشٹ کہا ہے وہ کیا سانحہ ماڈل ٹاؤن بھول گئے۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ 78 کروڑ روپے جاتی عمرہ کی دیواروں اور سیکورٹی پر خرچ کیے گئے، ملکی خزانے سے 28 کروڑ روپے اپنے ذاتی علاج پر خرچ کیے، 24 کروڑ روپے سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے خرچ میں لکھے گئے جب کہ وزیراعلیٰ کے لیے حکومت کا جہاز موجود تھا، جو غلط ہوگا اس پر زمین و آسمان ایک کردیا جائے گا مگر سیاسی تعصب اور مخالفت کی وجہ سے کوئی کیس غلط نہیں بنایا جائے گا۔

فیصل واوڈا نے کہا کہ میں نے کراچی میں شہباز شریف کو شکست دی ، میری جیت کو شہبازشریف کے جعلی دستخط سے چیلنج کیا گیا، میں شہباز شریف کو چیلنج کرتا ہوں کہ وہ ری کاؤنٹنگ کروالیں اگر میری شکست ہوئی تو میں وزارت کے ساتھ ساتھ اسمبلی رکنیت سے مستعفی ہوجاؤں گا لیکن شہباز شریف کی شکست کی صورت میں وہ بھی اسمبلی رکنیت سے استعفیٰ دیں۔

ملک میں جمہوری نظام کو کچھ ہوا تو ذمہ دار پی ٹی آئی ہوگی، سعد رفیق

 اسلام آباد: خواجہ سعد رفیق کا کہنا ہے کہ اگر ریاست میں یہی حالات رہے تو جمہوری نظام خطرے میں ہے اور ملک میں جمہوری نظام کو کچھ ہوا تو ذمہ داری پی ٹی آئی پر ہوگی۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کے دوران خواجہ سعد رفیق کا کہنا تھا کہ پروڈکشن آرڈر جاری کرنے پر آپ کا شکر گزار ہوں،جانتا ہوں کہ اسپیکر صاحب آپ پر ہمارے پروڈکشن آرڈر کے حوالے سے دباؤ ہوتاہے۔ ان کا کہنا تھا کہ  جیل میں پہلی بار نہیں گیا، 7 ماہ سے نیب کی زیرحراست ہوں، جانتا ہوں رگڑا کیوں لگ رہاہے، مجھے میری تقریروں کی وجہ سے رگڑا لگ رہا ہے۔

سعد رفیق کا کہنا تھا کہ گریبان پکڑ کر اور کنپٹی پر پستول رکھ کر میثاق نہیں ہوتا، میثاق معیشت یاد رہا میثاق جمہوریت یاد کیوں نہیں رہا، یہ نہیں ہو سکتا آمرانہ اقدامات کریں اور میثاق بھی ہو، میثاق ضرور کیجئے لیکن میثاق جمہوریت سے شروع کیجیے۔ جو ان کے پلے ہے وہ بھی ہمیں پتہ ہے جو ہمارے پلے ہے وہ بھی ہمیں پتا ہے، پانچ سال حکومت کرکے آئے ہیں سب معلوم ہے۔

رہنما (ن) لیگ کا کہنا تھا کہ منتخب وزیراعظم این آر او نہیں کرسکتا، سلیکٹڈ کا لفظ آپ کو پسند نہیں لیکن این آر او سلیکٹڈ ہی دے سکتا ہے، نیب کا کالا قانون ملک کی جڑیں کھوکھلا کر رہاہے، جس پر شک ہوتا ہے پکڑ کر جیل میں ڈال دیا جاتاہے، آپ عدالت بھی بننا چاہتے ہیں اور مدعی بھی۔

خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ اگر ریاست میں یہی حالات رہے تو جمہوری نظام خطرے میں ہے اور ملک میں جمہوری نظام کو کچھ ہوا تو ذمہ داری تحریک انصاف پر ہوگی، یہاں پانچ سال کسی کے بھی آرام سے نہیں نکلتے، وزیر اعظم آستینیں چڑھا کر کہتے ہیں کہ نہیں چھوڑوں گا، موجودہ حالات میں تو 2 سال بھی نہیں نکلیں گے۔

خواجہ سعد رفیق کا کہنا تھا کہ بجٹ سے کیا کرپشن کا نیا سیلاب نہیں آئے گا، حکومت نے اپنے بیانات سے اپنی ساکھ ختم کر دی ہے، حکومت نے لوگوں سے گھروں کا وعدہ کیا اور گھر گرادیے، انہوں نے روزگار کا وعدہ کیا اور روزگار چھین لیا، پیسے نہیں تو صوبوں کو رقم کہاں سے دیں گے، رواں مالی سال کابجٹ پی ٹی آئی حکومت کےتابوت میں آخری کیل ثابت ہوگا۔

ن لیگ کو سمجھ نہیں آرہا وہ ن ہے، م ہے یا ش لیگ، فواد چوہدری

اسلام آباد: وفاقی وزیر فواد چوہدری نے کہا ہے کہ ن لیگ کو سمجھ نہیں آرہا وہ ن لیگ ہے یا م لیگ یا ش لیگ۔

وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شریف خاندان اور زرداری فیملی سے این آر او کی خبروں کی تردید کی۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے سوشل میڈیا پر چلنے والی ڈیل کی خبروں کو مسترد کیا ہے، یہ نہیں ہوسکتا کہ آپ اربوں روپے لوٹیں اور پھر کہیں کہ معاف کردیں، قانون میں پلی بارگین موجود ہے اس سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔

فواد چوہدری نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے واضح کیا ہے قانون سے باہر کوئی نہیں، کسی سے نہ ڈیل ہوگی اور نہ ڈھیل ہوگی۔ مسلم لیگ (ن) میں اندرونی اختلافات پر انہوں نے کہا کہ ن لیگ کو سمجھ نہیں آرہا وہ ن لیگ ہے یا م لیگ یا ش لیگ۔

واضح رہے کہ شہباز شریف نے قومی اسمبلی میں بجٹ تقریر کے دوران حکومت کو میثاق معیشت کی پیشکش کی تھی لیکن مریم نواز نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے اس پیشکش کو مسترد کردیا ہے۔

قطر کا پاکستان میں 3 ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کا اعلان

دوحہ: قطر کی حکومت نے پاکستان میں 3 ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کا اعلان کردیا۔

امیر قطر شیخ تمیم بن حمد الثانی کے دورہ پاکستان کے ثمرات نظر آنے لگے۔ قطر کی سرکاری نیوز ایجنسی کے مطابق قطر کی حکومت پاکستان میں براہ راست سرمایہ کاری اور ڈپوزٹس کی صورت میں 3 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کرے گی۔ نئی سرمایہ کاری کے بعد قطر کی پاکستان میں سرمایہ کاری 9 ارب ڈالرز تک پہنچ جائے گی۔

مشیر خزانہ حفیظ شیخ نے نئی قطری سرمایہ کاری کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ شیخ تمیم بن حماد الثانی نے پاکستانی خزانے میں جمع کروانے اور سرمایہ کاری کیلئے تین ارب ڈالرکا اعلان کیا ہے، اس پر امیر قطر کا شکریہ ادا کرتا ہوں، دونوں ممالک کے تعلقات مزید بہتر کرنے کی یقین دہانی پر بھی امیر قطر کے شکرگزار ہیں۔

امیر قطر شیخ تمیم بن حمد الثانی نے ہفتہ اور اتوار کو پاکستان کا دو روزہ دورہ کیا ہے جس کے دوران دونوں ممالک کے درمیان مختلف شعبوں میں تعاون کے لیے مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط کئے گئے۔

وزیراعظم کی انا کے باعث قومی اسمبلی میں لفظ ’سلیکٹڈ‘ پر پابندی لگائی گئی، بلاول

 اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی کے چیرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ وزیراعظم کی انا کے باعث قومی اسمبلی میں لفظ ’سلیکٹڈ‘ پر پابندی لگائی گئی۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ وزرا کے غیر سنجیدہ رویے پر قوم سے معافی مانگتا ہوں۔ بلاول نے پشتون تحفظ موومنٹ (پی ٹی ایم) کے رکن قومی اسمبلی محسن داوڑ اور علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے کا مطالبہ دہرایا۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کے اقدامات کی وجہ سے ملک جل رہا ہے، ان کا ہر فیصلہ غلط ثابت ہوتا ہے، سیاست، معیشت اور حکومت سمیت وزیراعظم جس کام کو ہاتھ لگاتے ہیں وہ خراب ہوجاتا ہے، ان کا ہر فیصلہ ایسا ہے جیسے آگ پر تیل چھڑک رہے ہوں، حکومت دوغلی پالیسی بند کرکے اپنا بجٹ واپس لے، حکومت نے آئی ایم ایف کے سامنے گھٹنے ٹیک دیے ہیں۔

بلاول بھٹو زرداری نے قومی اسمبلی میں لفظ سلیکٹڈ پر پابندی پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ایک سال پہلے میری تقریر میں جس لفظ پر وزیراعظم نے ڈیسک بجائے آج وہی لفظ ممنوع قرار دے دیا گیا ہے، ملک میں عوام، صحافت اور سیاست کچھ بھی آزاد نہیں، سلیکٹڈ کوئی غیر پارلیمانی لفظ نہیں لیکن وزیراعظم کی انا کی وجہ سے یہ پابندی لگائی گئی اور تاریخی سنسر شپ کی جارہی ہے، یہ کیسی آزادی ہےکہ ممبران اسمبلی کےالفاظ حذف کیےجاتےہیں، نیا پاکستان سنسرڈ پاکستان ہے جو نامنظور ہے، حکومت آگ پر مزید تیل چھڑک رہی ہے، اپوزیشن کی آواز کو دبانے سے غصہ کہیں اور نکلے گا۔

آل پارٹیز کانفرنس 26 جون کو اسلام آباد میں ہوگی، مولانا فضل الرحمان

اسلام آباد: جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اعلان کیا ہے کہ آل پارٹیز کانفرنس (اے پی سی) کا اجلاس 26 جون کو اسلام آباد میں ہوگا۔

اسلام آباد میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے جے یو آئی کے سربراہ مولانا فضل الرحمان آل پارٹیز کانفرنس کے اجلاس کا حتمی اعلان کرتے ہوئے بتایا ہے کہ اے پی سی کا اجلاس 26 جون کو اسلام آباد میں ہوگا جس میں تمام سیاسی جماعتی شرکت کریں گی اور اجلاس کا اعلامیہ بھی جاری کیا جائے گا۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ اے پی سی اجلاس کے حوالے سے تمام جماعتوں سے مشاورت جاری ہے، جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق سے بھی ایک گھنٹہ ملاقات ہوئی اور انہوں نے کسی قسم کی ناراضی کا اظہار نہیں کیا۔ اے پی سی کے فورم میں جو فیصلے ہوں گے اجلاس کے کے بعد تبصرہ ہوگا۔

پاکستان کی سعودی ایئر پورٹ پر حملے کی شدید الفاظ میں مذمت

اسلام آباد: پاکستان نے سعودی عرب کے ابھاکے ایئرپورٹ پر حوثی باغیوں کی جانب سے حملے کی شدید مذمت کی ہے۔

غیرملکی خبر ایجنسی کے مطابق سعودی عرب کے جنوب مغربی علاقے کے شہر ابھا کے ایئرپورٹ پر حوثی باغیوں کی جانب سے رواں ماہ دوسرا حملہ کیا گیا ہے، جس میں ایک شامی باشندہ جاں بحق اور مختلف ممالک سے تعلق رکھنے والے 21 افراد زخمی ہوئے۔

پاکستان نے سعودی ایئرپورٹ پر حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے، دفترخارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ایئر پورٹ پر حملے میں ایک شخص جاں بحق اور 21 زخمی ہوئے، پاکستان اس حملے کی شدید الفاظ میں مذمت اور بردار ملک سعودی عرب کی سلامتی اور علاقائی سالمیت کو درپیش خطرے میں یکجہتی اور حمایت کا اعادہ کرتا ہے۔

Google Analytics Alternative