قومی

سعودی ایران کشیدگی؛ وزیر اعظم ثالثی کیلیے ایران کا دورہ کریں گے

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان سعودی ایران کشیدگی کم کرنے کے لیے بطور ثالث اتوار کو ایران کا دورہ کریں گے۔

وزیراعظم عمران خان سعودی عرب اور ایران کے درمیان ثالثی کی کوششیں کررہے ہیں جس کے لیے وہ اتوار کو ایران کا دورہ کریں گے جہاں ان کی ایرانی صدرحسن روحانی سےملاقات ہوگی۔

سفارتی ذرائع کے مطابق وزیراعظم ایرانی صدر حسن روحانی سے ملاقات کے فوری بعد سعودی عرب جائیں گے جہاں ان کی سعودی قیادت سے ایرانی صدر سے ملاقات پر بات چیت ہوگی۔

واضح رہے کہ پاکستان سعودی عرب اور ایران کے مابین کشید گی میں کمی لانے کے لیے ثالثی کا کردار ادا کررہا ہے۔

میرے وزیر خارجہ بننے سے کشمیر کا موضوع پوری دنیا میں گونج رہا ہے، شاہ محمود قریشی

لتان: شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ میرے وزیر خارجہ بننے سے 54 سال بعد اقوام متحدہ سمیت پوری دنیا میں کشمیر کا ایشو گونج رہا ہے۔

ملتان میں ورکرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ 2018ء کے انتخابات سے قبل کہا جاتا تھا نوجوان سیاست میں کچھ نہیں کرسکتے، آخری وقت تک لوگ سمجھتے تھے کہ مرکز میں پی ٹی آئی اور پنجاب میں (ن) لیگ کی حکومت بنے گی، لیکن کے پی سے چلنے والی ہوا نے پنجاب اور وفاق کو اپنی لپیٹ میں لیا، اب سندھ کے عوام بھی تحریک انصاف کی جانب دیکھ رہے ہیں، آئندہ سندھ میں بھی بلا چلے گا۔

شاہ  محمود قریشی کا کہنا تھا کہ جب اقتدار سنبھالا تو معیشت شدید بحران سے دوچار تھی اور خزانہ خالی تھا، ہم نے بڑے مشکل حالات میں بجٹ پیش کیا، اگر قطر، سعودی عرب اور یو اے ای تعاون نہ کرتا تو پاکستان دیوالیہ ہوجاتا، ہم نے مشکل فیصلے کیے، یہ جو موجودہ مہنگائی ہے اس میں اضافہ ڈالر کی قدر بڑھنے سے ہوا، تاہم اب حالات پہلے سے بہتر ہیں، ترقی کے راستے کھل رہے ہیں، معیشت کے حالات بدلیں گے، چین کے سرمایہ کار پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے کو تیار ہے، سی پیک 2 پر بھی بہت جلد کام شروع ہوجائے گا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ ملک میں طرح طرح کی افواہیں پھیلائی جارہی ہیں، خارجہ پالیسی اور داخلہ مسائل پر تمام ادارے ایک پیج پر ہیں، پاکستان محفوظ ہاتھوں میں ہے اور جو لوگ یہ کہہ رہے ہیں کہ یہ اور وہ ہونے والا ہے ان کو منہ کی کھانی پڑے گی، کشمیر کا مسئلہ بھی حل ہوگا، ہم نے پوری دنیا میں کشمیریوں کی آواز پہنچائی۔

شاہ محمود قریشی نے مزید کہا کہ عمران خان نے دنیا بھر کی توجہ کشمیر کی طرف مبذول کرائی، میرے وزیر خارجہ بننے سے 54 سال بعد اقوام متحدہ سمیت پوری دنیا میں کشمیر کا ایشو گونج رہا ہے اور دنیا بھر میں کشمیر بنے گا پاکستان کے نعرے لگ رہے ہیں۔

حکومت نے کشمیر پر 24 اکتوبر تک لائحہ عمل نہ دیا تو اہم اعلان کریں گے، سراج الحق

راولاکوٹ: امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ حکومت نے اگر 24 اکتوبر تک کشمیر پر لائحہ عمل کا اعلان نہ کیا تو ہم اپنے لائحہ عمل کا اعلان کریں گے۔

راولا کوٹ میں ’عزم جہاد کشمیر کانفرنس‘ سے خطاب  کرتے ہوئے سراج الحق نے کہا کہ 68 دن سے کشمیر میں کرفیو نافذ ہے اور ٹیپو سلطان ٹویٹر پر مصروف ہیں، وزیر اعظم کہتے ہیں کہ میں بھی ٹیپو سلطان بننا چاہتا ہوں مگر ٹرمپ انہیں اجازت ہی نہیں دیتا، آج وقت کے ٹیپو سلطان نے اپنے دفتر سے آدھا گھنٹہ باہر نکل کر کشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا ہے۔

امیرجماعت اسلامی نے کہا کہ اللہ کا عذاب ہے کہ حکومت دشمن سے نہیں لڑتی مگر اسے ڈینگی مچھر سے لڑنا پڑرہا ہے، حکومت جان بوجھ کر ایسے ایشوز اٹھا رہی ہے جن سے مسئلہ کشمیر پس منظر میں چلا گیا، دنیا بھر کے اخبارات اور میڈیا کشمیر میں بھارتی مظالم پر چیخ رہا ہے مگر ہمارا میڈیا اندرونی سیاست میں الجھا ہوا ہے۔

سراج الحق نے کہا کہ 1947ء میں قائداعظم نے فوج کو کشمیریوں کی مدد کا حکم دیا تھا اگر لائن آف کنٹرول توڑنا غداری ہے تو پہلا غدار میں ہوں گا۔

وزیراعظم کا ترک صدر کو ٹیلی فون، دہشتگردی کیخلاف موقف کی حمایت

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے ترک صدر رجب طیب اردوان کو ٹیلی فون کرکے دہشت گردی کے خلاف ان کے موقف کی حمایت کی۔

وزیراعظم عمران خان نے ترکی کے صدر رجب طیب اردوان کو ٹیلی فون کیا اور دہشت گردی کے خلاف ان کے موقف کی تائید کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے باعث70ہزار جانوں کا نقصان برداشت کیا اور 30 لاکھ مہاجرین کا بوجھ دہائیوں تک برداشت کیا لہذا دہشت گردی کے خلاف ترکی کے موقف کی بھرپور حمایت کرتا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان ترکی کو درپیش چیلنج اور خطرات کو سمجھتا ہے اور ترکی کی مکمل حمایت اور یکجہتی کا اظہار کرتا ہے اور ترکی کی شام کے مسئلے کے حل، خطے میں امن وا ستحکام کی کوششوں کی کامیابی کے لیے دعاگو ہیں جب کہ پاکستانی حکومت اورعوام ترک صدر کے پرجوش استقبال کے منتظر ہیں۔

واضح رہے ترک صدر رواں ماہ پاکستان کا دورہ کریں گے اور 23 اکتوبر کو 2 روزہ دورے پر اسلام آباد آئیں گے اور پاکستان کی اعلی سیاسی وعسکری قیادت سے ملاقاتیں کریں گے۔

پاک فوج کے 3 میجرز ڈسپلن کی خلاف ورزی پر برطرف، 2 کو قید کی بھی سزا

راولپنڈی: پاک فوج کے تین میجرز کو ڈسپلن کی خلاف ورزی اور مس کنڈکٹ پر سزا دے دی گئی۔

آئی ایس پی آرکے مطابق پاک فوج کے تین میجرزکوڈسپلن کی خلاف ورزی اورمس کنڈکٹ پرسزا دے دی گئی۔ تینوں میجرزکوالزامات ثابت ہونے پرملازمت سے برطرف کیا گیا۔

آئی ایس پی آرکے مطابق دو میجرز کو دودوسال قید کی سزا بھی سنائی گئی۔ ان کے خلاف الزامات میں اختیارات کا غلط استعمال اورغیرقانونی سرگرمیوں میں ملوث ہونا بھی شامل ہے۔

چوہدری شوگر ملز کیس؛ نواز شریف 14 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے

اہور: قومی احتساب  بیورو (نیب) نے مسلم لیگ (ن) کے قائد نوازشریف کو جیل سے چوہدری شوگر ملز کیس میں گرفتار کرلیا۔

نیب نے سابق وزیراعظم نوازشریف کو چوہدری شوگر مل کیس میں کوٹ لکھپت جیل سے گرفتار کر کے احتساب عدالت میں پیش کیا۔ نیب پراسکیوٹر حافظ اسد اعوان نے کیس میں مزید تفتیش کے لیے نواز شریف کے 15 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی جس پر احتساب عدالت نے نواز شریف کو 14 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے کرتے ہوئے 25 اکتوبر کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا۔

سابق وزیراعظم نواز شریف نے عدالت میں بیان دیا کہ نیب نے مجھ سے جیل میں بھی تفتیش کی، یہ آئے اور مجھ سے مختلف سوالات پوچھے، جو مجھے معلوم تھا بتا دیا جو معلوم نہیں تھا کہ دیا مجھے علم نہیں لیکن مجھے جیل میں وکلاء سے بھی نہیں ملنے دیتے۔ میرے والد کاروباری آدمی تھے، سیاست میں آنے سے قبل ہی 1937 سے 1971 کاروبار کے ذریعے پیسہ آیا۔

اس موقع پر سابق وزیراعظم نے سوال کیا کہ  بتائیں کرپشن کہاں ہوئی ہے، میں اس ملک کا تین مرتبہ وزیر اعظم رہا، مجھے گوانتاناموبے لے جائیں یا جہاں مرضی ہو لے جائیں، اگر ایک پیسے کی کرپشن دکھا دیں تو میں سیاست سے دستبردار ہو جاوں گا۔

نواز شریف کی پیشی کے موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔  مسلم لیگ (ن) کے کارکنان نے احتساب عدالت کی جانب جانے کی کوشش کی تو پولیس نے انہیں روک دیا جس پر کارکنان اور پولیس کے درمیان ہاتھا پائی بھی ہوئی۔

دبئی لینڈ ڈپارٹمنٹ پاکستانیوں کے اثاثوں کی تفصیلات فراہم کرے گا، شبر زیدی

فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے چیئرمین شبر زیدی کا کہنا ہے کہ دبئی لینڈ ڈپارٹمنٹ، ایف بی آر کو دبئی میں موجود پاکستانیوں کے اثاثوں کی تفصیلات فراہم کرے گا۔

چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کیے گئے ٹوئٹ میں کہا کہ ’فیڈرل بورڈ آف ریونیو حکام کی 9 اور 10 اکتوبر کو اثاثوں کے مالکان کی معلومات کے تبادلے سے متعلق متحدہ عرب امارات کے حکام سے ملاقات ہوئی’۔

شبر زیدی نے ٹوئٹ میں مزید کہا کہ ’دبئی لینڈ ڈپارٹمنٹ فوری طور پر دبئی میں پاکستانیوں کے اثاثوں کی تفصیلات فراہم کرے گا اور اقامہ کے غلط استعمال سے بھی نمٹا جائے گا’۔

sdfdsfsdخیال رہے کہ 4 اکتوبر کو شبر زیدی نے معاشی خوشحالی کے لیے علاقائی استحکام کے موضوع پر اسلام آباد میں منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ گزشتہ 20 سال میں 6 ارب ڈالر بیرون ملک منتقل ہوئے اور یہ رقم بھی قانونی چینلز سے منتقل کی گئی۔

شبر زیدی نے کہا تھا کہ پاکستانیوں کے 100 ارب ڈالر ملک سے باہر ہونے کا تاثر بلکل غلط ہے جبکہ بیرون ملک بھیجی گئی رقم واپس پاکستان لانے کا کوئی طریقہ موجود نہیں۔

انہوں نے کہا تھا کہ پاکستانی اب بھی اپنا سرمایہ بیرون ملک بھیج رہے ہیں جس میں کرپشن کا پیسہ 15 سے 20 فیصد ہے۔

لندن میں الطاف حسین کے گرد قانونی شکنجہ مزید سخت

لندن: بانی ایم کیو ایم الطاف حسین پر نفرت انگیز تقریر کیس میں فرد جرم عائد کردی گئی ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق لندن کے سدک پولیس اسٹیشن میں ایم کیو ایم کے بانی الطاف حسین کو نفرت انگیز تقریر کے الزام میں تیسری مرتبہ طلب کیا گیا تاہم انہوں نے اس بار بھی سوالوں کے جوابات نہیں دیے۔ پولیس کو سوالات کے جواب نہ دینے اور شواہد کی روشنی میں پراسیکیوشن نے ان پر انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت فرد جرم عائد کردی۔

فرد جرم عائد کئے جانے کے بعد بانی ایم کیو ایم کو سینئیر ڈسٹرکٹ جج ایما آربتھنوٹ کے روبرو پیش کیا گیا۔ عدالت نے انہیں ضمانت پر رہا کردیا تاہم وہ کسی بھی میڈیا کے ذریعے تقاریر نہیں کرسکیں گے۔ اس کے علاوہ عدالت نے الطاف حسین کی رہائش گاہ پر رات کو کسی بھی شخص کے آنے اور عدالتی حکم کے بغیر ان کے ملک سے باہر جانے پر بھی پابندی لگادی۔

برطانوی قانون کے مطابق فرد جرم عائد ہونے کے بعد بانی ایم کیوایم کے خلاف ٹرائل تقریباً 2 ہفتے میں مکمل ہوجائے گا۔

دوسری جانب وفاقی وزیرسائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے بانی متحدہ سے متعلق ٹویٹ میں کہا کہ اُمید ہے قاتل زندگی کے آخری دن جیل میں گزارے گا، فتح انصاف کی ہوگی۔

واضح رہے کہ الطاف حسین پر 2016 میں نفرت انگیز تقریروں کاالزام ہے۔ انہیں 11 جون کو گرفتار بھی کیا گیا تھا تاہم بعد میں انہیں ضمانت پر رہا کردیا گیا تھا۔

Google Analytics Alternative