- الإعلانات -

گوگل کی نئی اسمارٹ مسیجنگ سروس کی تیاری

گوگل ایک نئی موبائل مسیجنگ سروس کی تیاری پر کام کررہا ہے جس میں آرٹی فیشل انٹیلی جنس (مصنوعی ذہانت) کو شامل کرکے حریف کمپنیوں بشمول فیس بک کا مقابلہ کرنے کی کوشش کی جائے گی۔میسجنگ سروسز اس وقت دنیا بھر میں مقبول ترین اپلیکشنز میں سے ایک ہیں اور ان کو استعمال کرنے والوں کی تعداد دو ارب سے زائد ہے۔مگر گوگل کی دو میسجنگ سروسز ہینگ آﺅٹ اور میسنجر فیس بک کی واٹس ایپ اور میسنجر سے تو کیا دیگر متعدد اپلیکشنز سے بہت پیچھے ہیں۔امریکی روزنامے وال اسٹریٹ جرنل کی ایک رپورٹ کے مطابق اپنی نئی سروس میں گوگل کی جانب سے چیٹ بوٹس کو شامل کرنے کی منصوبہ بندی کی گئی ہے جو ایسا سافٹ ویئر پروگرام ہے جو اس میسجنگ اپلیکشن کے اندر سوالات کے جواب دینے کا کام کرے گا۔صارفین اپنے دوستوں یا کسی چیٹ بوٹ کو ٹیکسٹ کرسکیں گے جو اس کے بارے میں ویب اور دیگر ذرائع سے معلومات حاصل کرکے کسی سوال کا جواب دے گا۔یہ ابھی واضح نہیں کہ گوگل کی جانب سے اس سروس کو کب تک متعارف کرایا جاتا ہے یا اسے کیا نام دیا جاتا ہے، بلکہ ابھی تو یہ سوال بھی باقی ہے کہ یہ کوشش کامیاب بھی ہوسکے گی یا نہیں۔صارفین عام طور پر میسجنگ سروسز کا حصہ اس لیے بنتے ہیں کیونکہ وہ دیگر صارفین کو جانتے ہیں، گوگل کو اس طرح کا نیٹ ورک تشکیل دینے میں جدوجہد کا سامنا کرنا پڑے گا۔رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ گوگل کی ایک ٹیم اس نئی سروس کی تیاری کے لیے کم از کم ایک سال سے کام کررہی ہے۔توقع کی جارہی ہے کہ اس سروس میں موسم، تصاویر، نیوز اور دیگر موضوعات پر سرچ کے لیے چیٹ بوٹس فراہم کیے جانے کا امکان ہے اور صارفین اس حوالے سے معلومات گوگل سرچ انجن پر تلاش کرنے کی بجائے ایک ٹیکسٹ میسج بھیج کر حاصل کرسکیں گے۔اس رپورٹ پر گوگل کے ترجمان نے بات کرنے سے انکار کیا۔