سا ئنس اینڈ ٹیکنالوجی

بوڑھی مکھیاں جیلی میں دوا شامل کرکے جوان مکھیوں کو بیماری سے بچاتی ہیں

کیمبرج: شہد کی مکھیوں کے بارے میں ایک اہم انکشاف ہوا ہے کہ وہاں موجود بوڑھی مکھیاں جسمانی دفاعی نظام مضبوط کرنے والے مالیکیول جیلی میں منتقل کرتی ہیں تاکہ جوان مکھیاں بیماریوں سے محفوظ رہ سکیں۔

واضح رہے کہ مکھیوں کے چھتوں میں موجود لاروے کو جیلی پر پالا جاتا ہے جسے مکھیاں تیار کرتی ہیں اور بوڑھی مکھیاں اس میں بیماری سے بچانے والے مالیکیول گھولتی ہیں۔

کیمبرج یونیورسٹی کے پروفیسر ایال ماوری نے انکشاف کیا ہے کہ ماں مکھیاں اپنے لاروے کو کھلانے کے لیے ایک طرح کی چپکنے والا مادہ بناتی ہیں جسے ’رائل جیلی‘ کہتے ہیں اور اس میں وہ خاص پروٹین اور آراین اے شامل کرتی ہیں جس سے جوان مکھیوں کا جسمانی دفاعی نظام مضبوط ہوتا ہے اور وہ بیماریوں سے بچی رہتی ہیں۔

ڈاکٹر ایال کے مطابق اب تک کسی بھی جاندار میں اس طرح سے آر این اے کا تبادلہ نہیں دیکھا گیا تھا۔ ماہرین نے رائل جیلی میں ایسے آر این اے دریافت کئے ہیں جو دس اقسام کے وائرس کو روکتے ہیں اور جیسے ہی چھتے میں کوئی انفیکشن پھیلتا ہے مکھیاں آر این اے بنانے لگتی ہیں۔

اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ آر این اے مکھیوں کی ایک نسل سے دوسری میں منتقل ہوتا ہے لیکن امراض سے بچانے کے علاوہ بھی یہ دیگر کئی اور کاموں کو ممکن بناتا ہے۔ بعض افراد کہتے ہیں کہ جیلی میں شامل خاص آراین اے کھاکر ایک عام مکھی ملکہ مکھی بنتی ہے لیکن اس کی تصدیق نہیں ہوسکتی ہے ۔ لیکن یہ طے ہیں کہ اس طرح مکھیوں کی نئی نسل آنے والے نئے ماحولیاتی اور طبی مشکلات کے لیے تیار ہوجاتی ہیں۔

ایک تصویر میں 265,000 کہکشائیں، ہبل کا کارنامہ

واشنگٹن: ہبل خلائی دوربین کی لاتعداد تصاویر کو جوڑ کر ایک حیرت انگیز تصویر بنائی گئی ہے جس میں ایک ہی جگہ 265,000 مختلف کہکشائیں دیکھی جاسکتی ہیں۔

اس تصویر کو ہبل پر کام کرنے والی ایک مخصوص ٹیم نے بنایا ہے جسے ہبل لیگسی فیلڈ کا نام دیا گیا ہے۔ تصویر کا مدھم ترین نقطہ بھی ایک بہت بڑی کہکشاں کو ظاہر کرتا ہے۔

تصویر بنانے میں ماہرین نے کئی سال لگائے ہیں اور کئی ہزار تصاویروں کو جوڑ کر ایک موزائیک بنایا ہے جس میں ہزاروں فلکیاتی اجسام کو سمویا گیا ہے۔ ان میں سے بعض کہکشائیں زمین سے اربوں نوری سال کے فاصلے پر واقع ہیں جو کائنات کے ابتدا میں پیدا ہوئی تھیں۔

لگ بھگ 7500 مختلف تصاویر سے بنائے جانے والے اس پوسٹر میں کہکشاؤں کو مختلف طولِ موج مثلاً حقیقی روشنی، الٹراوائلٹ اور ایکس رے وغیرہ میں دیکھا جاسکتا ہے جبکہ 16 برس کا ڈیٹا استعمال کیا گیا ہے اور ان تصاویر کی پروسیسنگ کے لیے کئی سافٹ ویئر اور 31 ہبل پروگراموں سے مدد لی گئی ہے۔

تحقیقی ٹیم کے سربراہ گارتھ الینگورتھ کہتے ہیں کہ ایک ہی تصویر میں کائنات کے پھیلاؤ اور کہکشاؤں کے ارتقا کو دیکھاجاسکتا ہے۔ ان میں بچہ کہکشاں سے لے کر جوان اور مکمل ترین کہکشائیں بھی شامل ہیں جو اپنے اپنے تشکیلی مراحل سے گزررہی ہیں۔

تصویر سازی کے لیے باقاعدہ کام 2004 میں شروع کیا گیا تھا۔ تاہم ہبل کے بعد دیگر خلائی دوربینوں سے بھی کائناتی تصاویر کا موزائک بنایا جائے گا۔

مارک زکربرگ کا اربوں روپے مالیت کا نیا گھر کیسا ہے؟

فیس بک کے بانی مارک زکربرگ دنیا کے امیر ترین افراد میں سے ایک ہیں بلکہ 5 امیر ترین شخص ہیں۔

بلومبرگ بلین ائیر انڈیکس کے مطابق مارک زکربرگ 75 ارب ڈالرز سے زائد کے مالک ہیں اور 2018 سے 2019 کے دوران ان کی دولت میں 23 ارب ڈالرز کا اضافہ ہوا۔

اور اب انہوں نے چپکے سے اربوں روپے مالیت کا گھر خرید لیا تاکہ موسم گرما کی تعطیلات سے زیادہ لطف اندوز ہوسکیں۔

وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ 34 سالہ ارب پتی نے حال ہی میں کیلیفورنیا کے معروف سیاحتی مقام لیک تاہو (Tahoe) پر 2 جائیدادیں حال ہی میں خریدی ہیں۔

عوام کی نظر سے اس معاملے کو دور رکھنے کے لیے مارک زکربرگ نے یہ دونوں گھر جن کی مجموعی مالیت 5 کروڑ 90 لاکھ ڈالرز (8 ارب 34 کروڑ پاکستانی روپے سے زائد) ہے، کو ایک کمپنی اور ویلتھ منیجر کے ذریعے خریدا۔

ان جائیدادوں کے معاہدے میں یہ شق بھی رکھی گئی کہ ان گھروں کی انٹرنیٹ پر فروخت کے لیے دی گئی تصاویر کو ہٹالیا جائے گا تاہم ان میں سے ایک جائیداد کی پروموشنل ویڈیو تاحال آن لائن موجود تھی جس سے بزنس انسائیڈر نے تصاویر حاصل کرلیں۔

اس گھر کو دی Carousel Estate کا نام دیا گیا ہے جو کہ لیک تاہو کے مغربی کنارے پر موجود ہے اور اسے مارک زکربرگ نے گزشتہ سال 2 کروڑ 20 لاکھ ڈالرز (3 ارب پاکستانی روپے سے زائد) میں خریدا تھا۔

اس پرتعیشن گھر کی تصاویر دیکھیں۔

یہ جائیداد اس جھیل کے مغربی کنارے پر ساڑھے 3 ایکڑ رقبے پر پھیلی ہوئی ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

اس جائیداد میں 200 فٹ کا کنارہ بھی شامل ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

گھر کے آگے ایک پلیٹ فارم ہے جہاں کشتیوں کو لنگرانداز کیا جاسکتا ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

جھیل کے قریب آرام کے لیے بھی ایک مقام بنایا گیا ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

گھر کے مرکزی حصے میں ایک بڑی نشست گاہ ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

گھر میں سونے کے لیے 8 کمرے جبکہ 10 باتھ رومز ہیں۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

سونے کا کمرا اس طرح سجا ہوا ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

مہمانوں کا کمرا بھی بہت زیادہ آرام دہ ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

یہاں کا کچن بھی بہت بڑا ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

گھر کی دیکھ بھال کرنے والے ملازمین کے لیے بھی ایک الگ گھر بنا ہوا جس میں 3 بیڈرومز ہیں۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

آنر 20 کی پہلی جھلک سامنے آگئی

چینی کمپنی ہواوے کا ذیلی برانڈ آنر کا نیا فلیگ شپ فون رواں ماہ متعارف کرایا جارہا ہے مگر کمپنی نے اس کی جھلک پیش کردی ہے۔

آنر 20 فلیگ شپ فون کو 21 مئی کو متعارف کرایا جائے گا اور یہ پہلا موقع ہوگا جب آنر کسی فون کو یورپ میں ایک ایونٹ کے دوران پیش کرے گی۔

کمپنی کی جانب سے جاری تصویر میں فون کے فرنٹ کو دکھایا گیا ہے جس میں گول ایجز اور کونے موجود ہیں جبکہ نوچ کی جگہ پنچ اسٹائل فرنٹ کیمرا دیا گیا ہے، جس سے عندیہ ملتا ہے کہ اب یہ کمپنی بھی نوچ کو الوداع کہنے والی ہے۔

کمپنی کی جانب سے اس فون کی تشہیر کیپچر ونڈر ہیش ٹیگ ے کی جارہی ہے، یعنی اس فون (یا فونز امکان ہے کہ یہ ایک سے زائد ماڈلز میں متعارف کرایا جائے گا) میں فوٹوگرافی پر زیادہ توجہ مرکوز کی جائے گی۔

اس فون میں نمبر 4 پر زور دیا جارہا ہے جو کہ ممکنہ طور پر اس کے بیک پر 4 کیمروں کی موجودگی کا حوالہ ہے یا اس سیریز کے ماڈلز کا۔

اس فون کی دیگر لیکس کے مطابق یہ آنر 20 اور آنر 20 پرو ماڈلز کی شکل میں متعارف کرایا جائے گا جس میں سے ایک 6.1 انچ جبکہ دوسرا 6.5 انچ کے او ایل ای ڈی ڈسپلے دیا جائے گا۔

لیکس کے مطابق آنر پی 20 پرو میں 4 بیک کیمروں کا سیٹ اپ دیا جائے گا جبکہ 32 میگا پکسل سیلفی کیمرا موجود ہوگا۔

ان دونوں فونز میں کیرین 980 پراسیسر دیا جائے گا جبکہ آنر 20 میں سکس جی بی ریم اور آنر 20 پرو میں 8 جی بی ریم دیئے جانے کا امکان ہے۔

یوٹیوب کے ماہانہ صارفین کی تعداد 2 ارب سے متجاوز

فیس بک اس وقت دنیا کی مقبول ترین سماجی رابطے کی ویب سائٹ ہے جس کے ماہانہ صارفین کی تعداد 2 ارب 38 کروڑ سے متجاوز کرچکی ہے مگر اب اس کی نمبرون پوزیشن کو گوگل کی ویڈیو شیئرنگ سائٹ سے خطرہ لاحق ہوچکا ہے۔

یوٹیوب پر ماہانہ لاگ ان ہونے والے صارفین کی تعداد 2 ارب سے متجاوز کرگئی ہے اور اس طرح 2 ارب صارفین والی فیس بک کے بعد دوسری سائٹ بن گئی ہے۔

گوگل کے چیف ایگزیکٹو سندر پچائی نے یہ اعلان جمعرات کو کرتے ہوئے بتایا کہ گزشتہ سہ ماہی کے دوران مہینے میں کم از کم ایک بار یوٹیوب استعمال کرنے والے صارفین کی تعداد میں 20 کروڑ کا اضافہ ہوا اور اس طرح یہ تعداد ایک ارب 80 کروڑ سے بڑھ 2 ارب تک پہنچ گئی۔

یوٹیوب نے یہ سنگ میل اس وقت حاصل کیا ہے جب اسے اپنی سائٹ پر خطرناک مواد اپ لوڈ ہونے پر متعدد تنازعات کا سامنا ہے اور اس وجہ سے متعدد بڑی کمپنیوں سے یوٹیوب سے اپنے اشتہارات بھی ہٹادیئے ہیں۔

سندرپچائی نے اس اعلان کے ساتھ بتایا کہ یوٹیوب اب لوگوں کے لیے تعلیمی ہب بھی ثابت ہورہی ہے اور یہاں لوگ صرف رفریح کے لیے نہیں آتے بلکہ معلومات بھی تلاش کرتے ہیں۔

ویسے فیس بک اور یوٹیوب کی مقبولیت کے لیے سب سے بڑا خطرہ واٹس ایپ ہے جس کے صارفین کی تعداد گزشتہ سال فروری میں ڈیڑھ ارب سے متجاوز کرگئی تھی اور اس میسجنگ اپلیکشن کو استعمال کرنے والوں میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔

اس کے بعد سے فیس بک نے اپنی زیرملکیت اس ایپ کے صارفین کے اعدادوشمار جاری نہیں کیے مگر توقع کی جاسکتی ہے کہ یہ تعداد 2 ارب کے آس پاس ہوگی۔

خیال رہے کہ جب 2014 میں فیس بک نے واٹس ایپ کو 19 ارب ڈالرز کو خریدا تھا تو اس کے ماہانہ صارفین کی تعداد صرف 45 کروڑ تھی اور 5 سال کے دوران اس میں کئی گنا اضافہ ہوچکا ہے۔

فیس بک میسنجر ڈیسک ٹاپ پر آنے کے لیے تیار

فیس بک نے اپنی مقبول میسجنگ اپلیکشن میسنجر کا ڈیسک ٹاپ ورژن رواں سال کے آخر تک متعا۴رف کرانے کا اعلان کیا ہے۔

سان جوز، کیلیفورنیا میں سالانہ ایف 8 ڈویلپر کانفرنس کے موقع پر یہ اعلان کیا گیا۔

کمپنی کا کہنا تھا کہ اس وقت دنیا میں ڈیسک ٹاپ کمپیوٹرز کے مقابلے میں موبائل فونز کی تعداد زیادہ ہے جبکہ کمپیوٹرز کے استعمال کی شرح میں بھی کمی آئی ہے۔

مگر دفاتر میں کام کرنے والے اپنا زیادہ تر وقت ڈیسک ٹاپ کمپیوٹر پر گزارتے ہیں اور میسجنگ ایک اہم ضرورت ہے جس کے لیے مخصوص ایپ ان افراد کو سہولت فراہم کرے گی۔

کمپنی کا کہنا تھا کہ لوگ کسی بھی ڈیوائس پر میسج تک آسان رسائی چاہتے ہیں اور کئی بار انہیں شیئر اور لوگوں سے رابطے کے لیے کچھ زیادہ درکار ہوتا ہے۔

فیس بک کی جانب سے اس اقدام سے اسے میسنجر کو اشتہارات کے لیے زیادہ پرکشش مقام بنانے میں مدد دے گا تاکہ آمدنی میں مزید اضافہ ہوسکے۔

میسنجر کے ڈیسک ٹاپ ورژن میں آڈیو کالز، گروپ ویڈیو کالز اور وہ سب فیچرز موجود ہوں گے جو موبائل ورژن میں دستیاب ہیں۔

یہ ممکنہ طور پر میسنجر ڈاٹ کام پر مبنی ہوگا جو اس وقت فیس بک میسنجر کا ویب ورژن ہے اور چیٹ کے لیے فیس بک ویب انٹرفیس کے تیز ترین متبادل کے طور پر بھی کام کرتا ہے۔

اور یہ ویب سائٹ واقعی بہترین ہے جس کے بارے میں اکثر فیس بک صارفین کو علم ہی نہیں۔

کمپنی کا کہنا تھا کہ ڈیسک ٹاپ ایپ کی ابھی آزمائش ہورہی ہے اور یہ رواں سال کے آخر میں دنیا بھر میں لوگوں کو دستیاب ہوگی۔

وہ پاس ورڈ جو کبھی کسی اکاؤنٹ کا نہیں ہونا چاہیے

ہر سال مئی کی پہلی جمعرات کو دنیا بھر میں ورلڈ پاس ورڈ ڈے آن لائن اکاﺅنٹس کے بہتر تحفظ کے لیے منایا جاتا ہے۔

اور اس کا سب سے بہتر طریقہ یہی ہوسکتا ہے کہ ایسے مضبوط پاس ورڈز کا انتخاب اپنے آن لائن اکاﺅنٹس کے لیے کیاا جائے جو ان لوگوں کو شرمندہ کردے جن کے اکاﺅنٹس کو ہیک کرنا سیکنڈوں کا کام ہے۔

سپلیش ڈیٹا نامی کمپنی ہر سال بدترین پاس ورڈز کی فہرست جاری کرتی ہے جن کو ہیک کرنا ہیکرز کے لیے کوئی مسئلہ نہیں اور گزشتہ سال کے آخر میں بھی اس نے 2018 میں لیک ہونے والے 50 لاکھ کے لگ بھگ پاس ورڈز کے ڈیٹا کی بنیاد پر25 بدترین پاس ورڈز کی فہرست مرتب کی تھی۔

ان میں سب سے بدترین پاس ورڈ 123456 رہا جو کہ 2011 سے اس فہرست میں نمبرون آرہا ہے۔

اس کے بعد دوسرے نمبر پر جو لفظ رہا وہ خود پاس ورڈ ہے جو کہ کئی برس سے دوسرے نمبر پر ہی ہے جبکہ تیسری پوزیشن کا ‘ اعزاز 123456789 کے نام رہا۔

ان بدترین پاس ورڈز کی فہرست تو آپ نیچے دیکھ ہی لیں گے مگر یہ بھی ذہن میں رکھیں کہ اس طرح کے انتخاب کسی بھی ہیکر کے لیے اندازہ لگانے کا کام بہت زیادہ آسان ہوجاتے ہیں۔

ہیکرز عام طور پر بیشتر عام پاس ورڈز کو اکاﺅنٹس کی سیکیورٹی توڑنے والے سافٹ ویئر میں ڈال کر اسے چلاتے ہیں اور اس طرح کی فہرستوں میں شامل تمام الفاظ کو سب سے پہلے آزما کر دیکھتے ہیں۔

تو اگر آپ کا پاس ورڈ بھی اس فہرست میں ہے تو اسے فوری طور پر تبدیل کرلیں۔

سپلیش ڈیٹا کے ایک بیان کے مطابق کمزور پاس ورڈز کے استعمال کے خطرات کی زیادہ سے زیادہ پبلسٹی سے لوگوں کے اندر اپنے پاس ورڈز کو مضبوط بنانے کی حوصلہ افزائی ہوگی، مزید اہم بات یہ ہے کہ ہر ویب سائٹ کے لیے مختلف پاس ورڈ ہونا چاہئے۔

خیال رہے کہ سائبر سکیورٹی ماہرین کا مشورہ ہے کہ پاس ورڈ ایسا ہونا چاہئے کہ وہ آپ کو بھی بمشکل یاد ہو اور اسی صورت میں وہ زیادہ محفوظ بھی ثابت ہوتا ہے۔

اگر آپ اپنے پاس ورڈ کو محفوظ سمجھتے ہیں تو اس کی تصدیق ایک ویب ساٹ سے بخوبی ممکن ہے جو بتاتی ہے کہ کسی پاس ورڈ کو توڑنے کے لیے ہیکر کو کتنا وقت درکار ہوگا۔

اگر آپ بھی اسے آزمانا چاہے تو لنک یہاں موجود ہے (اگرچہ یہ سائٹ کہتی ہے کہ آپ کے پاس ورڈ اپنے پاس محفوظ نہیں کرتی تاہم احتیاط کے طور پر بہتر ہے کہ اپنے اصل پاس ورڈ لکھنے سے گریز کریں)۔

2018 کے 25 بدترین پاس ورڈز یہ ہیں۔

123456

password

123456789

12345678

12345

111111

1234567

sunshine

qwerty

iloveyou

princess

admin

welcome

666666

abc123

football

123123

monkey

654321

!@#$%^&*

charlie

aa123456

donald

password1

qwerty123

ہواوے دنیا کی سب سے بڑی اسمارٹ فون کمپنی بننے کے قریب

ویسے تو ایپل کے آئی فون کو دنیا بھر میں پسند کیا جاتا ہے مگر جہاں تک فروخت کی بات ہے تو کافی عرصے پہلے ہی سام سنگ نے اسے پیچھے چھوڑ دیا تھا۔

مگر اب جنوبی کورین کمپنی کی نمبرون پوزیشن بھی خطرے میں ہے کیونکہ ایپل سے عالمی سطح پر دوسری بڑی اسمارٹ فون کمپنی کا اعزاز چھیننے والی ایک چینی کمپنی نے اب پہلی پوزیشن پر نظریں جمالی ہیں۔

جی ہاں چینی کمپنی ہواوے امریکا میں فون کیے بغیر بھی دنیا کی سب سے بڑی اسمارٹ فون کمپنی بننے کے قریب پہنچ گئی ہے۔

ہواوے نے دوسری بڑی کمپنی کے طور پر اپنی پوزیشن مضبوط بناتے ہوئے ایپل پر کافی سبقت حاصل کرلی ہے اور اب اس کے سامنے سام سنگ کا چیلنج ہے۔

انٹرنیشنل ڈیٹا کارپوریشن (آئی ڈی سی) نامی کمپنی کی رپورٹ کے مطابق چینی کمپنی واحد کمپنی تھی جس نے رواں سال کی پہلی سہ ماہی کے دوران اسمارٹ فونز کی فروخت کے حوالے سے بہتری دکھائی جبکہ ایپل اور سام سنگ کی سیلز کی شرح میں کمی آئی۔

جنوری سے مارچ 2019 کے دوران ہواوے نے لگ بھگ 6 کروڑ اسمارٹ فونز فروخت کیے گئے جو گزشتہ سال کے اسی عرصے کے مقابلے میں 50.3 فیصد زیادہ ہیں اور چین میں اس کمپنی کے فونز کو زیادہ پسند کیا گیا۔

اس کے مقابلے میں سام سنگ اور ایپل کے فونز کی فروخت کی شرح میں کمی دیکھنے میں آئی۔

سام سنگ کے اسمارٹ فونز گزشتہ سال کے اسی عرصے کے مقابلے میں 8.1 فیصد کمی کے ساتھ 7 کروڑ 19 لاکھ یونٹ رہے جبکہ ایپل کے آئی فونز کی فروخت میں 30.2 فیصد کی نمایاں کمی دیکھنے میں آئی اور 3 کروڑ 64 لاکھ سیٹس فروخت ہوئے۔

ایپل اور سام سنگ دونوں نے کچھ عرصے پہلے سرمایہ کاروں کو خبردار کیا تھا کہ اسمارٹ فونز کی فروخت میں کمی دیکھنے میں آئے گی جس کی کئی وجوہات بھی بیان کی گئی تھیں جیسے امریکا اور چین کے درمیان تجارتی کشیدگی، چین میں کمپنیوں کے درمیان سخت مسابقت اور دیگر۔

ہواوے کا ایپل کو پیچھے چھوڑ کر دنیا کی دوسری بڑی کمپنی بننے کا سفر راتوں رات مکمل نہیں ہوا تھا بلکہ اس کمپنی نے کئی سال تک نئے کم قیمت اسمارٹ فونز میں جدید فیچرز جیسے ان ڈسپلے فنگرپرنسٹ سنسر، اچھے کیمرے سسٹمز اور دیگر متعارف کرائے تھے۔

آئی ڈی سی کی رپورٹ کی خاص بات یہی تھی کہ ہواوے سام سنگ کو اس وقت پیچھے چھوڑنے کے قریب ہے جب وہ امریکا جیسی بڑی مارکیٹ میں کوئی فون فروخت ہی نہیں کررہی کیونکہ امریکی کمپنی نے اس کی ڈیوائسز پر گزشتہ سال پابندی عائد کردی تھی۔

Google Analytics Alternative