- الإعلانات -

سرفراز احمد ٹی ٹوئنٹی ٹیم کے کپتان مقرر

لاہور: پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے وکٹ کیپر بلے باز سرفراز احمد کو ٹی ٹوئنٹی کرکٹ ٹیم کا کپتان بنانے کا اعلان کردیا۔

سرفراز احمد کو ٹی ٹوئنٹی ٹیم کا کپتان مقرر کیے جانے کے بعد پی سی بی کے چیئرمین شہریار خان کا کہنا تھا کہ سرفراز احمد کو کپتان مقرر کرنے کے فیصلے سے آگاہ کردیا اور ہماری نیک خواہشات ان کے ساتھ ہیں۔

28 سالہ سرفراز احمد نے ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کے چاروں میچوں میں پاکستان کی نمائندگی کی لیکن 21 ٹی ٹوئنٹی میچوں میں 120.24 کے بہتر اسٹرائیک ریٹ اور بہترین فارم کے باوجود انہیں چاروں میچوں میں بیٹنگ کیلئے نچلے نمبروں پر بھیجا گیا۔

سرفراز نے پاکستان کی پہلی ڈومیسٹک ٹی ٹوئنٹی لیگ پاکستان سپر لیگ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی شاندار انداز میں قیادت کرتے ہوئے اسے فائنل تک رسائی دلائی لیکن فائنل میں اسلام آباد یونائیٹڈ کے خلاف انہیں ناکامی کا منہ دیکھنا پڑا۔

واضح رہے کہ 2 روز قبل شاہد آفریدی نے پاکستان کی ٹی ٹوئنٹی کرکٹ ٹیم کی کپتانی چھوڑنے کا اعلان کیا تھا۔

شاہد آفریدی نے اس اعلان کے لیے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر کا سہارا لیا جہاں ایک پریس ریلیز میں ان کا کہنا تھا کہ وہ بطور کھلاڑی قومی ٹیم اور لیگ کرکٹ کے لیے دستیاب رہیں گے۔

گزشتہ روز ڈان نیوز سے خصوصی گفتگو میں چیئرمین شہریار خان کا کہنا تھا کہ شاہد آفریدی کی جانب سے شکست کی ذمہ داری خود قبول کرنا اور قیادت سے دستبردار ہونا بڑے پَن کی بات ہے۔

انہوں نے کہا یہ بات خوش آئند ہے کہ شاہد آفریدی ٹی ٹوئنٹی ٹیم کے لیے دستیاب ہوں گے، لیکن انہیں ٹیم میں شامل کرنے کا فیصلہ سلیکشن کمیٹی کرے گی۔

چیئرمین پی سی بی کا کہنا تھا کہ شاہد آفریدی کے دستبردار ہونے کے بعد نائب کپتان سرفراز احمد ٹی ٹوئنٹی کپتان کے لیے سب سے مضبوط امیدوار ہیں تاہم وہ پی سی بی حکام سے مشورہ کر کے جلد کپتان کا حتمی اعلان کریں گے۔

اضح رہے کہ حالیہ ورلڈ ٹی 20 اور اس سے قبل ایشیا کپ میں پاکستان ٹیم کی ناکامی کے بعد شاہد آفریدی کو نہ صرف شائقین کی جانب سے تنقید کا سامنا کرنا پڑا بلکہ قومی ٹیم کے کوچ اور منیجر نے بھی اپنی رپورٹس میں آفریدی کی قائدانہ صلاحیتوں پر سوالات اٹھائے تھے۔

گزشتہ روز پاکستان کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ وقار یونس نے پی سی بی کی جانب سے تجاویز پر عملدرآمد نہ ہونے پر اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔

وقار یونس کے استعفے کے فوری بعد کرکٹ بورڈ نے سلیکشن کمیٹی کو تحلیل کرتے ہوئے ٹیم کے قلیل اور طویل مدتی فیصلوں کا اعلان کیا تھا۔