- الإعلانات -

پی سی بی میں عہدیداروں کی ڈگریوں کا معاملہ مشکوک

لاہور: عثمان واہلہ ہوٹل مینجمنٹ میں ڈپلومہ کرنے کے بعد پی سی بی انٹرنیشنل کرکٹ کے سربراہ جبکہ ڈائریکٹر مارکیٹنگ نائلہ بھٹی اپنی تعلیمی قابلیت کا ثبوت دینے میں تاحال ناکام ہیں پاکستان کرکٹ بورڈ میں کچھ بھی ہو سکتا ہے ، ہوٹل مینجمنٹ میں ڈپلومہ کرنے والا انٹرنیشنل کرکٹ کو سنبھال رہا ہے ۔ تعجب یہ ہے کہ پانچ سال سے بورڈ میں اہم عہدے پر کام کرنے والے سے کسی نے ڈگری تک نہیں مانگی ۔پاکستان میں میرٹ کی دھجیاں صرف کرکٹرز کے انتخاب میں نہیں اڑائی جاتی ۔ عہدیداروں کے چناؤ میں بھی من پسند پالیسی اپنائی جاتی ہے ۔ عثمان واہلہ اس وقت پی سی بی انٹرنیشنل کرکٹ کے سربراہ ہیں ۔ پانچ سال پہلے میڈیا سیل میں آئے تو بورڈ کو تعلیمی قابلیت گریجویشن بتائی ۔سچ یہ ہے کہ عثمان واہلہ نے امریکن سکول سے انٹر اور سوئٹرزلینڈ سے ہوٹل مینجمنٹ میں ڈپلومہ کر رکھا ہے ۔ عثمان واہلہ دعویٰ کرتے ہیں کہ انہوں نے ہوٹل مینجمنٹ میں گریجویشن بھی کر رکھی ہے جس کی ڈگری بورڈ میں پانچ سال سے جمع نہیں کرائی گئی ۔ اس سے یہ راز تو کھل گیا کہ بورڈ میں نوکری کرنی ہے تو تعلیم یافتہ ہونا ضروری نہیں ۔ڈائریکٹر مارکیٹنگ نائلہ بھٹی اپنی تعلیمی قابلیت کا ثبوت دینے میں تاحال ناکام ہیں ۔ دو اہم عہدیداروں کی تعلیمی قابلیت کا علم نہیں جبکہ چیئرمین پی سی بی شہریار خان کرکٹرز کو کم پڑھا لکھا ہونے کا طعنہ دیتے ہیں ۔ بورڈ کا موقف ہے کہ دونوں عہدیداروں کے پاس چار ماہ ہیں ، ثبوت نہ دے سکے تو فارغ ہو سکتے ہیں