- الإعلانات -

آسٹریلیا سے پانچواں ون ڈے بطور کپتان اظہر علی کا آخری میچ قرار

ایڈیلیڈ: آسٹریلیا سے پانچویں ون ڈے کو بطور کپتان اظہر علی کا آخری میچ قرار دیا جا رہا ہے، ناکامیوں کے سبب بورڈ انھیں عہدے سے ہٹانے کا ذہن بنا چکا بس رسمی اعلان باقی رہ گیا۔

سینئر بیٹسمین کا کہنا ہے کہ میں کبھی ان چیزوں کی فکر نہیں کرتا، جمعرات کے میچ میں بھی بغیر کسی دباؤ کے حصہ لوں گا۔ اظہر علی ٹیسٹ میں تو بیحد کامیاب ہیں مگر ان کا انداز جدید ون ڈے کرکٹ سے مطابقت نہیں رکھتا، بطور قائد30 ون ڈے میچز میں سے وہ ٹیم کو محض 12 میں فتوحات دلا سکے ہیں، ان کے دور میں ٹیم رینکنگ میں شرمناک نویں پوزیشن پر بھی جا چکی جبکہ ویسٹ انڈیز کیخلاف یو اے ای میں کلین سوئپ نے دباؤ تھوڑا کم کیا، مگر آٹھویں پوزیشن کے سبب ورلڈکپ میں براہ راست شرکت پر تاحال سوالیہ نشان عائد ہے۔

آسٹریلیا سے سیریز 1-3 سے گنوانے کے بعد اظہر پھر مسائل کا شکار ہو چکے ہیں۔ اظہر پہلے میچ میں انجرڈ ہوئے تو حفیظ نے بطور قائم مقام کپتان دوسرے ون ڈے میں ٹیم کو کامیابی دلا دی ،مگر تیسرے میں ان کی زیرقیادت بھی گرین شرٹس ہار گئے، چوتھے میچ میں اظہر واپس آئے مگر ناکامی ہی ہاتھ آئی تاہم اب چیئرمین بورڈ شہریارخان بھی واضح کر چکے کہ پانچویں ون ڈے کے بعد اظہر علی کی کپتانی کا فیصلہ ہو گا تاہم سرفراز احمد اس پوسٹ کو سنبھالنے کیلیے مضبوط امیدوار ہیں۔

ادھر گزشتہ روز پریس کانفرنس میں جب اظہر علی سے بطور کپتان دباؤ کے بارے میں سوال پوچھا گیا تو انھوں نے کہا کہ میں کبھی ان چیزوں کی فکر نہیں کرتا، پانچویں ون ڈے میں بھی بغیر کسی پریشر کے حصہ لوں گا، مستقبل میں کیا ہوگا اس کا نہیں سوچ رہا، میری توجہ کا مرکز آسٹریلیا سے میچ ہے، میری ہمیشہ کوشش ہوتی ہے کہ جو موقع ملے اس سے بھرپور فائدہ اٹھاؤں۔