- الإعلانات -

ود ہولڈنگ ٹیکس کے خلا ف ملک کے مختلف شہر وں میں شٹر ڈاﺅن ہڑتال،فیصل آباد میں زبردستی دوکانیں بند کرانے پرجھگڑا

 

لاہور: ود ہولڈنگ ٹیکس کے خلاف ملک بھر کے بڑے شہروں مارکیٹیں بند رہیں ۔فیصل آباد میں تاجر برادری کی جانب سے زبر دستی دوکانیں بند کرانے پرجھگڑا بھی ہوا ۔ لاہور، کراچی ، راولپنڈی ، اسلام آباد میں بھی اہم مارکیٹیں بند رہیں۔ سندھ تاجر اتحاد نے ہڑتال کی حمایت کی اور کراچی الیکٹرونکس ڈیلرز ایسوسی ایشن نے دکانیں بند رکھیں بعض بڑی مارکیٹوں میں بھی جزوی طور پر ہڑتال کی گئی۔لاہور میں بھی تمام بڑی مارکیٹیں مکمل طور پر بند رہیں۔ بیڈن روڈ ، میکلوڈ روڈ ، سرکلر روڈ ، اکبری منڈی ، شاہ عالم مارکیٹ ، انار کلی ، ہال روڈ ، مال روڈ ، حفیظ سنٹر اور لبرٹی سمیت اکثر مارکیٹوں میں کاروبار نہ ہوالیکن اردو بازار کھلا رہا۔راولپنڈی کے اہم مراکز راجہ بازار ، بینک روڈ ، صدر کینٹ ، مری روڈ ، سٹیلائٹ ٹاون میں مکمل شٹرڈاون رہا جبکہ اسلام آباد کی آبپارہ ، جناح سپر ، کوہسار اور سپر مارکیٹ سمیت دیگر تجارتی مراکز جزوی طورپر بند رہے۔فیصل آباد میں تاجروں نے گھنٹہ گھر کے اطراف میں احتجاجی ریلی نکالی گئی اور دھرنا بھی دیا۔ کچہری بازار اور بھوانہ بازار میں چند دکانیں کھولی گئیں جنہیں مشتعل تاجروں نے زبردستی بند کرا دیا۔ ایک دکاندار پر تشدد بھی کیا گیا۔خیبرپختونخوا حکومت کی جانب سے تاجروں کی ہڑتال کی حمایت کے بعد پشاور سمیت صوبے بھر میں مکمل شٹ ڈاون رہا۔ کوئٹہ سمیت بلوچستان میں آج کی ہڑتال سے لاتعلقی اختیار کی گئی۔ تاجروں کے ایک اور دھڑے نے ود ہولڈنگ ٹیکس کے خلاف پانچ اگست کو ہڑتال کی کال دے ہوئی ہے۔