- الإعلانات -

استعفیٰ دینے کا کوئی ارادہ نہیں”وقار یونس”

پاکستان کے کرکٹ ہیڈ کوچ وقار یونس نے اپنے استعفے سے متعلق میڈیا پر چلنے والی خبروں کو افسوس ناک قرار دیا ہے۔

وقار نے مقامی میڈیا پر چلنے والی ان خبروں کو مسترد کیا جن میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ وہ مایوس کن نیوزی لینڈ دورے کے بعد استعفیٰ دینے کو تیار ہیں۔

نیوزی لینڈ میں پاکستان کی اب تک کی کارکردگی انتہائی مایوس کن رہی ہے۔ گرین شرٹس پہلے ٹی ٹوئنٹی میچ میں کامیابی حاصل کرنے کے بعد باقی دو میچوں میں یک طرفہ مقابلے کے بعد شکست سے دوچار ہوئے۔

اسی طرح ون ڈے سیریز کا پہلا میچ بھی کیویز کے نام رہا جبکہ دوسرا میچ بارش کی نذر ہوگیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستانی کوچ نے کھلاڑیوں اور ٹیم مینجمنٹ کے درمیان ’اعتماد کے فقدان‘ پر استعفیٰ دینے کی دھمکی دی تھی۔

تاہم 44 سالہ سابق تیز باؤلر نے ان خبروں کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ ان خبروں سے انہیں تکلیف پہنچی۔’ایشیا کپ اور ورلڈ ٹی ٹوئنٹی سے قبل اس طرح کی رپورٹس افسوس ناک ہیں‘۔

’میرا استعفیٰ دینے کا کوئی ارادہ نہیں۔ جب ٹیم اچھی کارکردگی کا مظاہرہ نہیں کررہی ہوتی تو ایسی خبریں چلانا میڈیا کی عادت ہوتی ہے۔‘

وقار نے تسلیم کیا کہ دورہِ نیوزی لینڈ میں خاطر خواہ نتائج حاصل نہیں ہو سکے۔

وقار کا کہنا تھا کہ میچوں میں اچھی پوزیشن بنانے کے باوجود ٹیم کامیابیاں حاصل نہیں کر پا رہی۔

اس سے قبل بیٹنگ کوچ گرانٹ فلاور نے بھی کھلاڑیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا تھا کہ نیوزی لینڈ کے خلاف ٹیم کو ’اپنے دماغ کا استعمال‘ کرنا پڑے گا۔

پہلے میچ میں شکست کے بعد بیٹنگ کوچ کا کہنا تھا کہ ‘سچ بات یہ ہے کہ جس طرح کا آغاز ہمیں ملا تھا اس کے بعد ہمیں انہیں 200 کے قریب اسکور تک محدود کرنا چاہیے تھا۔’

فلاور کا مزید کہنا تھا کہ کھلاڑی اپنی غلطیوں سے نہیں سیکھ رہے اور یہ سب سے افسوس ناک پہلو ہے۔