کھیل

نیوزی لینڈ نے بھارت کو ورلڈ کپ سے باہر کردیا

مانچسٹر: نیوزی لینڈ سنسنی خیز مقابلے کے بعد بھارت کو ہراکر کرکٹ ورلڈ کپ 2019 کے فائنل میں پہنچ گیا ہے۔

کرکٹ ورلڈکپ 2019 کے پہلے سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ بھارت کو 18 رنز سے شکست دیکر ورلڈکپ کے فائنل میں پہنچ گیا ہے، نیوزی لینڈ نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے بھارت کو جیت کے لیے 240 رنز کا ہدف دیا جس کے جواب میں بھارت کی جانب سے اننگز کا آغاز روہت شرما اور لوکیش راہول نے کیا تاہم بھارتی ٹاپ آرڈر نیوزی لینڈ کے بولرز کے سامنے بے بس دکھائی دیا اور صرف 5 رنز پر 3 بیٹسمین پولین لوٹ گئے، روہت شرما، لوکیش راہول اور ویرات کوہلی نے صرف ایک ایک رن بنایا اور آؤٹ ہوگئے۔

24 رنز پر 4 کھلاڑی آؤٹ ہونے کے بعد رشپ پنٹ اور ہاردیک پانڈیا نے ٹیم کا اسکور آگے بڑھایا، دونوں کے درمیان 47 رنز کی شراکت قائم ہوئی تاہم رشپ پنٹ 32 رنز بناکر آؤٹ ہوگئے۔

ساتویں وکٹ کی شراکت میں مہیندرا سنگھ دھونی اور رویندرا جڈیجا کے درمیان 116 رنز کی شراکت قائم ہوئی، رویندرا جڈیجا نے جارحانہ کھیل کا مظاہرہ کیا اور 77 رنز بنائے تاہم چھکا مارنے کی کوشش میں وہ کیچ آؤٹ ہوگئے جب کہ اگلے ہی اوور میں دھونی بھی 50 رنز بناکر رن آؤٹ ہوگئے۔

بھارتی ٹیم مقررہ 49.3 اوورز میں 221 رنز ہی بناسکی، نیوزی لینڈ کی جانب سے میٹ ہنری نے 3، ٹرینٹ بولٹ اور مچل سانٹنر نے 2،2 وکٹیں حاصل کیں۔

اس سے قبل آج جب نیوزی لینڈ نے اپنی نامکمل اننگز 211 رنز 5 وکٹوں کے نقصان پر شروع کی تو صرف 15 رنز کے اضافے کے بعد راس ٹیلر رن آؤٹ ہوگئے جب کہ اگلی ہی گیند پر ٹام لیٹھم بھی کیچ آؤٹ ہوگئے۔

آخری 4 اوورز میں نیوزی لینڈ کی ٹیم کچھ خاص کارکردگی کا مظاہرہ نہ کرسکی اور مقررہ 50 اوورز میں 8 وکٹوں کے نقصان پر صرف 239 رنز ہی بناسکی۔ نیوزی لینڈ کی جانب سے راس ٹیلر نے 74 اور کپتان کین ولیمسن نے 67 رنز کی اننگز کھیلی۔

گزشتہ روز نیوزی لینڈ نے ٹاس جیت کر بیٹنگ کا فیصلہ کیا تو اننگز کا آغاز مارٹن گپٹل اور ہینری نکولس نے کیا تاہم مارٹن گپٹل صرف ایک رن بناکر آؤٹ ہوگئے، دوسری وکٹ پر کپتان ولیمسن نے نکولس نے محتاط بیٹنگ کرتے ہوئے اننگز کو آگے بڑھایا  تو 69 کے مجموعے پر نکولس  بولڈ ہوگئے، کپتان نے تجربہ کار راس ٹیلر کے ساتھ تیسری وکٹ پر 65 رنز جوڑ ے، اس دوران ولیمسن نے نصف سنچری اسکور کی تاہم وہ  134 کے مجموعی اسکور پر کیچ آؤٹ ہوگئے، ولیمسن نے 95 گیندوں پر 67 رنز بنائے جس میں 6 چوکے بھی شامل تھے۔

نیوزی لینڈ کی چوتھی وکٹ 162 رنز  پرجیمس نیشن کی صورت میں گری جو تجربہ کار راس ٹیلر کا ساتھ  چھوڑ گئے، انہوں نے صرف 12 رنز بنائے جب کہ گرینڈ ہوم 16 رنز بنا کر کیچ آؤٹ ہوگئے تاہم 46 عشاریہ ایک اوورز میں تیز بارش کی وجہ سے میچ روک دیا گیا تھا، کیوی ٹیم نے 46 اعشاریہ ایک اوورز میں 5 وکٹوں پر 211 رنز بنائے تھے۔

کھیل پر جتنی مرضی تنقید کریں لیکن خدارا نجی زندگی کو زیر بحث نہ لایا جائے، امام الحق

لاہور: امام الحق کا کہنا ہے کہ ہمارے کھیل پر بے شک جتنی مرضی تنقید کریں لیکن خدارا ہماری پرسنل لائف کو زیر بحث نہ لایا جائے۔

قذافی اسٹیڈیم لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے اوپنر امام الحق کا کہنا تھا کہ پہلا ورلڈکپ تھا زیادہ تر کھلاڑی پہلی بار کھیل رہے تھے، ہار جیت کھیل کا حصہ ہوتا ہے، ہم ورلڈکپ سے کافی پہلے انگلینڈ گئے تاکہ سپورٹ مل سکے لیکن ویسٹ انڈیز کے خلاف میچ میں عمدہ پرفارم نہ کر سکے۔

امام الحق نے کہا کہ میں اپنی پرفارمنس سے مطمئن ہوں، کوشش ہے کہ ذہنی طور پر خود کو مضبوط کروں، عوام معصوم ہیں، میڈیا نے ہی سفارشی کہا تاہم  میرا اللہ پر اور محنت پر یقین ہے، ہمارے کھیل پر بے شک جتنی مرضی تنقید کریں لیکن خدارا ہماری پرسنل لائف کو زیر بحث نہ لایا جائے۔

قومی ٹیم کے اوپنر نے کہا کہ چیف سلیکٹر کے جانے نہ جانے سے ہماری پرفارمنس کا کوئی تعلق نہیں، چیف سلیکٹر کو پی سی بی نے بنایا، ہمارا کام کھیلنا ہے، چیف سلیکٹر نے ہمیشہ بیک اپ کیا ہے، پہلے پانچ میچوں میں پرفارمنس نہ دینے کی وجہ چیف سلیکٹر نہیں ہوسکتے، سری لنکا کا میچ بارش کی نذر ہوا اس کا بھی نقصان ہوا۔

بابراعظم نے کہا کہ پہلا ورلڈکپ تھا کافی کچھ سیکھنے کو ملا، پی سی بی کا فیصلہ ہے کہ وہ کپتان کسے بناتا ہے، میرا کام محنت کرنا ہے جو میں کرتا ہوں، پہلے میچ میں اپنے پلان پر عمل نہیں کرسکے جب کہ  کپتان اور کوچ کا فیصلہ ہے کہ ٹیم کمبینیشن کیا ہونا ہے۔

بابراعظم نے کہا کہ بھارت سے میچ ہاریں تو ہمیشہ ہر چیز نیگیٹو ہی جاتی ہے، بھارت سے ہارنے کے بعد ہی ٹیم کی گروپ بندی کی باتیں ہوئیں اور جب جیتنا شروع ہوئے تو یہ گروپ بندی کی باتیں بھی ختم ہوگئیں۔

مکی آرتھر ڈوبتے کیریئر کو بچانے کیلیے ہاتھ پاؤں مارنے لگے

کراچی:  ورلڈکپ کے پہلے راؤنڈ سے اخراج پر پاکستانی کرکٹ میں بڑے پیمانے پر تبدیلیوں کا امکان ہے جب کہ کوچ مکی آرتھر کا بھی برقرار رہنا دشوار ہوگا،انھوں نے ڈوبتے کیریئر کو بچانے کیلیے ہاتھ پاؤں مارنے شروع کر دیے ہیں۔

ورلڈکپ میں قومی ٹیم کی ناقص کارکردگی کے بعد بڑے پیمانے پر تبدیلیوں کی بازگشت جاری ہے، کوچ مکی آرتھر کی کرسی بھی خطرے میں ہے مگر انھوں نے عہدے پر برقرار رہنے کیلیے کوششیں شروع کر دی ہیں، کوچ نے گذشتہ روز  لندن میں چیئرمین پی سی بی احسان مانی و ایم ڈی وسیم خان سے ملاقات کی اور گرین شرٹس کیلیے اپنے ’’کارنامے‘‘ گنوائے۔

انھوں نے ورلڈکپ2019کے پہلے راؤنڈ سے باہر ہونے کا ملبہ کارکردگی نہیں بلکہ قسمت پر ڈال دیا، وہ  پریس کانفرنس میں بھی نیٹ رن ریٹ کے قانون کو تنقید کا نشانہ بنا چکے جبکہ ان کے خیال میں نیوزی لینڈ کی ٹیم خراب کھیل پیش کرنے کے باوجود فائنل فور میں شامل ہو گئی۔

ذرائع کے مطابق بورڈ حکام نے انھیں کسی قسم کی یقین دہانی کرانے سے گریز کرتے ہوئے فیصلہ کرکٹ کمیٹی پر چھوڑنے کا کہا جس کے سربراہ وسیم ہی ہیں، آرتھر کو بتایا گیاکہ نئے کوچ کیلیے اشتہار دیا جائے گا اور  وہ بھی درخواست دے سکتے ہیں،کوچ کرکٹ کمیٹی میٹنگ میں اپنے دور کے حوالے سے پریذنٹیشن دیں گے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر مکی آرتھر کو برقرار نہ رکھا گیا تو نیا کوچ بھی غیرملکی ہی ہوگا، ایم ڈی وسیم خان کسی پاکستانی کوچ کا تقرر نہیں چاہتے، ان کے مطابق فارن کوچ قومی کرکٹرز کو بہتر انداز میں سنبھال سکتا ہے اور اس کی بات سنی بھی جاتی ہے، وسیم خان سابق کپتان وسیم اکرم اور رمیز راجہ کی رائے کو بہت اہمیت دیتے ہیں اور وہ دونوں بھی غیرملکی کوچ کے ہی حق میں ہیں۔

ٹیم میں گروپ بندی کی خبریں درست نہیں، عماد وسیم

اسلام آباد: قومی ٹیم کے آل راؤنڈر عماد وسیم کا کہنا ہے کہ سرفراز احمد کی کپتانی سے استعفی کا معاملہ کرکٹ بورڈ اور سلیکشن کمیٹی کا ہے۔ 

اسلام آباد میں قومی ٹیم کے اسپنرز عماد وسیم اور شاداب خان نے مشترکہ پریس کانفرنس کی اس موقع پر عماد وسیم نے کہا کہ کھیل میں ہار جیت ہوتی رہتی ہے، ٹیم میں گروپ بندی کی خبریں درست نہیں، ہم ٹیم ورک کے طور پر کھیلے جب کہ میچ کے دوران کوچ کا کردار کم ہوتا ہے، کھلاڑی نے ہی پرفامر کرنا ہوتا ہے اور کپتان اور کھلاڑی فیصلہ کرتے ہیں۔

عماد وسیم کا کہنا تھا کہ عمران خان بڑے سوچ کے مالک ہیں لیکن ہمیں ورلڈکپ کے دوران وزیراعظم کا کوئی پیغام نہیں آیا اور بھارت کے خلاف میچ کو ہماری قوم جنگ کی طرح لیتی ہے، بھارت سے شکست کے بعد ہم پر بہت دباؤ تھا،  سرفراز احمد نے بھارت کے میچ کے بعد خود میٹنگ بلائی تھی جس میں سرفرازنے کہا ہمیں ٹورنامنٹ میں کم بیک کرنا ہے۔

عماد وسیم نے کہا کہ رن ریٹ کا ایشو تھا لیکن پہلا میچ ہم بری طرح ہارے تھے اور میں قسمت کے بجائے محنت پر یقین رکھتا ہوں، افغانستان کے خلاف میچ میں شائقین کو تحمل کا مظاہرہ کرناچا ہیے تھا۔ ایک سوال کے جواب میں آل راؤنڈر نے کہا کہ سرفراز احمد کی کپتانی سے استعفی کا معاملہ کرکٹ بورڈ اور سلیکشن کمیٹی کا ہے۔

دوسری جانب شاداب خان کا کہنا تھا کہ انڈیا کے خلاف میچ ہارنے سے ہمیں افسوس ہے۔

جنوبی افریقہ کی فتح پر بھارت کی ’ لاٹری ‘ نکل آئی

لندن:  جنوبی افریقہ کے ہاتھوں آسٹریلوی ٹیم کی شکست سے بھارت کی ’لاٹری‘ نکل آئی، سیمی فائنل میں نسبتاً کمزور حریف نیوزی لینڈ سے مقابلہ ہوگا، ہاٹ فیورٹ انگلش ٹیم کو فائنل میں رسائی کیلیے صدیوں پرانے حریف کینگروز کو راہ سے ہٹانا ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق جنوبی افریقہ نے مانچسٹر میں کھیلے گئے آخری لیگ میچ میں آسٹریلیا کو 10 رنز سے شکست دی، 326 رنز کے تعاقب میں آسٹریلوی ٹیم 315 رنز پر آؤٹ ہوگئی، اس کی ناکامی کی وجہ سے کینگروز پوائنٹس ٹیبل پر دوسرے نمبر رہے جبکہ بھارت نے ٹاپ پوزیشن پائی، اس طرح ویرات کوہلی الیون کا پوائنٹس ٹیبل پر چوتھے نمبر پر رہنے والی نیوزی لینڈ ٹیم سے منگل کے روز پہلے سیمی فائنل میں مقابلہ ہوگا جبکہ دوسرے نمبرپر موجود آسٹریلیا اور تیسرے نمبر کی انگلش ٹیم کا ٹکراؤ دوسرے سیمی فائنل میں جمعرات کے روز ہوگا۔ آخری لیگ میچز سے قبل یہ امکان ظاہر کیا جارہا تھا کہ کینگروز کیویز اور بھارتی ٹیم انگلینڈ سے ٹکرائے گی تاہم آسٹریلوی ٹیم کی پروٹیز کے ہاتھوں غیرمتوقع شکست نے تمام حساب کتاب غلط کردیے ہیں۔

اس کے ساتھ ہی ایک طرح سے بھارتی ٹیم کی لاٹری نکل چکی جس کا سامنا سیمی فائنل میں ایک ایسی ٹیم سے ہوگا جوکہ اپنے گذشتہ تینوں میچز ہار چکی ہے، کیویز کو پاکستان، آسٹریلیا اور انگلینڈ تینوں نے مات دی اور اس کے پوائنٹس بھی گرین شرٹس کے برابر 11 ہی تھے مگر بہتر رن ریٹ کی وجہ سے کیویز فائنل فور میں جگہ بنانے میں کامیاب رہے۔

لیگ مرحلے میں بھارت اور نیوزی لینڈ کا مقابلہ بارش کی نذر ہوگیا تھا، کیویز نے ایونٹ میں زیادہ تر کامیابیاں کمزور ٹیموں کے خلاف ہی حاصل کیں، اس لیے سیمی فائنل میں ویرات کوہلی الیون سے ٹکراؤ ہی اس کا اصل امتحان ہوگا۔ دوسرے سیمی فائنل میں کرکٹ کے صدیوں پرانے حریف آسٹریلیا اور انگلینڈ آمنے سامنے ہوں گے۔ کینگروز لیگ مرحلے میں میزبان سائیڈ کو زیر کرچکے تاہم ایون مورگن کی ٹیم کو ورلڈ کپ جیتنے والی پہلی انگلش ٹیم کا اعزاز حاصل کرنے کیلیے اب صرف 2 مزید فتوحات درکار اور وہ اس کیلیے سرتوڑ کوشش کریں گے۔

کپتانی نہیں چھوڑ رہا، حتمی فیصلہ پی سی بی کرے گا، سرفراز احمد

پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے تصدیق کی ہے کہ وہ قومی ٹیم کی کپتانی نہیں چھوڑ رہے جبکہ انہوں نے ورلڈکپ میں قومی ٹیم کی کارکردگی کو اطمینان بخش قرار دے دیا۔

نیشنل اسٹیڈیم کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سرفراز احمد مطمئن نظر آئے۔

ورلڈکپ کے سیمی فائنل میں نہ پہنچنے پر قوم سے معافی مانگنے سے متعلق سوال پر سرفراز احمد نے کہا کہ معافی مانگنے کی کوئی بات نہیں، ہم نے دو چار پوائنٹس نہیں بلکہ 11 پوائنٹس کے ساتھ ایونٹ سے واپس آئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وہ اس وقت ٹیم کی کپتانی نہیں چھوڑ رہے جبکہ اس کا حتمی فیصلہ پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کو کرنا ہے، کیونکہ سارے فیصلے وہی کرتے ہیں۔

کرکٹ ورلڈکپ 2019 کے دوران قومی ٹیم کے ایونٹ سے باہر ہونے کے باوجود کھلاڑیوں کی فارمنس کو سرفراز احمد نے بہتر قرار دے دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ کھلاڑیوں نے اچھا کھیل پیش کیا، ہم بد قسمتی سے ورلڈکپ کے سیمی فائنل میں نہیں پہنچ سکے۔

سرفراز احمد نے بنگلہ دیش کے خلاف میچ میں 500 رنز بنانے سے متعلق اپنے بیان پر کہا کہ ‘میں نے کبھی ایسا نہیں کہا کہ ٹیم 500 رنز بنائے گی، صرف اتنا کہا تھا کہ اگر معجزہ ہوگیا تو 500 رنز بن سکتے ہیں۔ ‘

ایک سوال کے جواب میں سرفراز احمد نے کہا کہ پوری ٹیم ان کی اور کوچ کی مرضی سے ہی منتخب کی گئی تھی جبکہ صرف وہاب ریاض اس ٹیم کا حصہ نہیں تھے۔

اپنی بیٹنگ پوزیشن کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں سرفراز احمد کا کہنا تھا کہ میں نے ورلڈکپ میں جانے سے قبل ہی کہا تھا کہ میں نمبر 5 پر کھیلوں گا لیکن ایونٹ کے دوران ہمیں بیٹنگ آرڈر میں تبدیلی کرنا پڑی۔

محمد حسنین سے متعلق سوال پر سرفراز احمد نے بتایا کہ ہم ابتدائی میچوں میں اپنے سینئر کھلاڑیوں کے ساتھ میچ میں گئے تھے۔

سرفراز احمد نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ میں کھلاڑیوں کو بہتر جانتا ہوں، اگر مجھے موقع ملے تو میں آئندہ ایونٹ کے لیے ٹیم کو بہتر بنانے کی کوشش کروں گا۔

پاکستان کرکٹ کے اسٹرکچر پر بات کرتے ہوئے سرفراز احمد کا کہنا تھا کہ انہوں نے سنا ہے کہ ڈومیسٹک کرکٹ میں ٹیموں کی تعداد کو 6 کر دیا گیا ہے تاہم میری تجویز ہے کہ ان کی تعداد 8 کی جائیں۔

سرفراز احمد نے بتایا کہ بھارت سے شکست کے بعد ہمیں بڑی پریشانی کا سامنا ہوا، وہ وقت ٹیم کے لیے بہت مشکل تھا، کھلاڑیوں کو گراؤنڈ اور گراؤنڈ کے باہر بہت سی باتوں کا سامنا کرنا پڑا، کئی کھلاڑیوں نے اپنے ساتھ ہونے والے واقعات کو بورڈ کے سامنے رپورٹ بھی کیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسی وجہ سے بھارت کے خلاف میچ کے بعد کھلاڑیوں کے لیے 2 روز کا وقفہ لیا گیا، تاہم اس کے بعد ایک میٹنگ کی گئی جس میں کھلاڑیوں کی پرفارمنس کا جائزہ لیا گیا۔

آصف علی کو نہ کھلانے سے متعلق پوچھے گئے سوال کے جواب میں قومی ٹیم کے کپتان نے بتایا کہ ہماری کوشش ہوتی تھی کہ اس کی بیٹنگ آخری اوورز میں آئے تاکہ وہ زیادہ کارآمد ثابت ہوسکے اور افغانستان میں انہیں نہ کھلانے کا مقصد 5 باؤلرز کے ساتھ میدان میں جانا تھا۔

پریس کانفرنس کے آخر میں ورلڈکپ کی فیورٹ ٹیم سے متعلق پوچھے گئے سوال پر سرفراز احمد نے کہا کہ جو ٹیم اچھا کھیلے گی وہی جیتے گی۔

بابراعظم کا ون ڈے کرکٹ میں ایک اور اعزاز

پاکستان کرکٹ ٹیم کے مایہ ناز بلے باز بابراعظم نے ورلڈ کپ 2019 میں بہترین کارکردگی کے بعد انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کی درجہ بندی میں تیسری پوزیشن کا اعزاز حاصل کرلیا۔

آئی سی سی کی جانب سے جاری ایک روزہ کرکٹ کی تازہ درجہ بندی کے مطابق پاکستانی بلے بازوں کے علاوہ باؤلرز نے بھی ترقی کرتے ہوئے اپنی پوزیشن بہتر بنالی ہے۔

بلے بازوں کی درجہ بندی میں بھارت کے ویرات کوہلی اور روہت شرما 891 اور 885 پوائنٹس کے ساتھ بالترتیب پہلے اور دوسرے نمبر پر ہیں۔

بابر اعظم نے ورلڈ کپ میں پاکستان کی جانب سے متعدد ریکارڈ اپنے نام کیے جہاں طویل عرصے بعد سنچری بنانے والے مڈل آرڈر بلے باز بن گئے اور سابق بلے باز جاوید میانداد کا ورلڈ کپ میں سب سے زیادہ رنز بنانے کا ریکارڈ بھی اپنے نام کیا۔

ورلڈ کپ میں بہترین کارکردگی دکھانے پر آئی سی سی کی درجہ بندی میں بابراعظم نے دنیا کے مشہور بلے بازوں ویرات کوہلی اور روہت شرما کے بعد 827 پوائنٹس کے ساتھ تیسرا نمبر اپنے نام کرلیا ہے۔

بلے بازوں کی رینکنگ میں اوپنر امام الحق بھی ترقی کرتےہوئے 764 پوائنٹس کے ساتھ گیارھویں نمبر پر پہنچ گئے ہیں جبکہ ان کے ساتھی اوپنر فخر زمان کا نمبر 17 ہے۔

عالمی کپ میں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے حارث سہیل اپنی پوزیشن بہتر کرنے میں ناکام ہوئے اور 36 ویں نمبر پر موجود ہیں۔

ایک روزہ کرکٹ میں بلے بازی کی درجہ بندی میں جنوبی افریقہ کے کپتان ترقی پا کر چوتھے، نیوزی لینڈ کے روس ٹیلر تنزلی کے بعد پانچویں نمبر پر آگئے ہیں۔

آسٹریلیا کے ڈیوڈ وارنر نے پابندی کے بعد عالمی کرکٹ میں واپسی کرتے ہوئے درجہ بندی میں چھٹی پوزیشن حاصل کرلی ہے، انگلینڈ کے جوروٹ متعدد اچھی اننگز کے باوجود تنزلی کا شکار ہو کر ساتویں نمبر پر چلے گئے ہیں۔

نیوزی لینڈ کے کپتان کین ولیمسن اپنی ساتویں پوزیشن برقرار رکھنے میں کامیاب ہوئے ہیں، نویں نمبر جنوبی افریقہ کے کوئنٹن ڈی کوک پہنچے ہیں جبکہ آسٹریلیا کے کپتان ایرون فنچ تنزلی کے بعد دسویں نمبر پر ہیں۔

آئی سی سی کی تازہ درجہ بندی میں پاکستان کے باؤلرز سرفہرست 10 پوزیشن میں اپنی جگہ بنانے میں ناکام رہے ہیں تاہم شاداب خان ترقی پانے والے باؤلرز میں شامل ہیں، محمد عامر 12 اور شاہین شاہ آفریدی 23 نمبر پر بدستور براجمان ہیں۔

شاداب خان ترقی پانے کے باوجود 25 ویں نمبر پر ہیں، عماد وسیم باؤلنگ میں تنزلی کے بعد 37 ویں نمبر پر آگئے ہیں جبکہ حسن علی 41 ویں نمبر پر ہیں۔

بھارت کے جسپریت بمرا باؤلرز کی رینکنگ میں سرفہرست ہیں، نیوزی لینڈ کے ٹرینٹ بولٹ دوسرے، آسٹریلیا کے پیٹ کمنز تیسرے، جنوبی افریقہ کے کگیسو ربادا اور عمران طاہر بالترتیب چوتھی اور پانچویں پوزیشن پر ہیں۔

آل راؤنڈرز کی درجہ بندی میں بنگلہ دیش کے شکیب الحسن بدستور سرفہرست ہیں اور ابتدائی دس کھلاڑیوں کے نمبروں میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے جہاں پاکستان کے عماد وسیم چوتھے اور محمد حفیظ دسویں نمبر پر موجود ہیں۔

انگلینڈ کے بین اسٹوکس درجہ بندی میں دوسرے، افغانستان کے محمد نبی تیسرے، پاکستان کے عماد وسیم چوتھے اور افغانستان کے نوجوان کھلاڑی راشد خان بہترین آل راؤنڈرز کی فہرست میں پانچویں نمبر پر ہیں۔

پبلشنگ پارٹنر ورلڈ کپ: سیمی فائنل میں روایتی حریف انگلینڈ اور آسٹریلیا مدمقابل ہوں گے

دفاعی چیمپیئن آسٹریلیا کی جنوبی افریقی ٹیم کے ہاتھوں شکست کے ساتھ ہی ورلڈ کپ کی سیمی فائنل میچوں کی ٹیموں کا حتمی فیصلہ ہو گیا اور سیمی فائنل میں بھارت کا مقابلہ نیوزی لینڈ اور انگلینڈ کا آسٹریلیا سے ہو گا۔

ہفتے کو ورلڈ کپ کے دو آخری راؤنڈ میچز بھارت اور سری لنکا کے ساتھ ساتھ آسٹریلیا اور جنوبی افریقہ کے درمیان کھیلے گئے لیکن سیمی فائنل کی چاروں ٹیموں کا فیصلہ پہلے ہی ہو چکا تھا۔

البتہ پوائنٹس ٹیبل کی صورتحال کو دیکھتے ہوئے یہ واضح نہ تھا کہ کونسی ٹیم کس کے خلاف سیمی فائنل کھیلے گی۔

بھارت کی ٹیم نے عمدہ کارکردگی پیش کرتے ہوئے سری لنکا کو باآسانی 7 وکٹوں سے شکست دے دی اور پوائنٹس ٹیبل پر پہلی پوزیشن حاصل کر لی۔

اگر آسٹریلین ٹیم جنوبی افریقہ کو مات دے دیتی تو وہ پوائنٹس ٹیبل پر دوبارہ سرفہرست ہو جاتی لیکن پروٹیز نے کینگروز کو سنسنی خیز مقابلے کے بعد 10رنز سے ہرا کر ایونٹ کا کامیابی سے اختتام کیا۔

دوسری جانب اس شکست کے بعد راؤنڈ میچز کے اختتام پر بھارتی کی ٹیم پوائنٹس ٹیبل پر سرفہرست ہے، آسٹریلیا نے دوسری، انگلینڈ نے تیسری اور نیوزی لینڈ نے چوتھی پوزیشن حاصل کی۔

اب ورلڈ کپ کا پہلا سیمی فائنل 9 جولائی کو مانچسٹر میں بھارت اور نیوزی لینڈ کے درمیان کھیلا جائے گا، دونوں ٹیموں کے درمیان راؤنڈ میچ بارش کی نذر ہو گیا تھا۔

ایونٹ کے دوسرے فائنل میں 11 جولائی کو آسٹریلیا اور انگلینڈ کی ٹیم مدمقابل ہوں گی، آسٹریلیا نے راؤنڈ میچ میں انگلینڈ کو مات دی تھی۔

دونوں سیمی فائنل کی فاتح ٹیمیں 14جولائی کو لارڈز کے تاریخی میدان پر ورلڈ کپ کی ٹرافی کے لیے نبرد آزما ہوں گی۔

Google Analytics Alternative