بین الاقوامی

بی جے پی حکومت آنے کو مفید قرار دینا عمران خان کی ’ریورس سوئنگ‘ ہے، مودی

نئی دلی: بھارتی وزیراعظم نے پاکستانی ہم منصب کے جذبہ خیر سگالی کو اپنی منفی سوچ کا لبادہ پہناتے ہوئے ’ریورس سوئنگ‘ اور بھارتی الیکشن پر اثر انداز ہونے کی کوشش قرار دیا۔

بھارتی میڈیا کو انٹرویو دیتے ہوئے وزیراعظم مودی نے کہا ہے کہ عمران خان نے بی جے پی کی حمایت میں بیان دیکر ہمارے ووٹرز کو متنفر کرنے کی کوشش کی، پاکستانی وزیراعظم کا بی جے پی کی حکومت بننے کی صورت میں پاک بھارت مذاکرات میں کامیابی کے روشن امکان والا بیان کچھ اور نہیں بلکہ ’ریورس سوئنگ‘ ہے۔

بھارتی وزیراعظم نریندرا مودی نے روایتی ہٹ دھرمی کا اظہار کرتے ہوئے مضحکہ خیز دعویٰ کیا کہ عمران خان کے ریورس سوئنگ کو بھارتی عوام ہیلی کاپٹر شاٹ مار کر گراؤنڈ سے باہر پھینک دے گی۔ قبل ازیں عمران خان نے اپنی انتخابی مہم میں بھی میرا نام استعمال کرتے ہوئے ’مودی کا جو یار ہے غدار ہے‘ کا نعرہ استعمال کیا تھا۔

پلوامہ حملے کے سیاسی استعمال اور بالا کوٹ میں غلط اعداد و شمار سے متعلق سوال کا جواب گول کرتے ہوئے وزیراعظم مودی کا کہنا تھا کہ مجھے اپنی فوج پر مکمل اعتماد ہے اور فوج کی جانب سے پاکستان کے جانی نقصان سے متعلق پیش کیے گئے اعداد و شمار کو درست اور کسی قسم کی وضاحت کو لازمی محسوس نہیں کرتا۔

مودی نے اس سوال کے جواب میں حقائق پیش کرنے کے بجائے بات کا رخ بھارتی پائلٹ ابھی نندن کی جانب موڑتے ہوئے کہا کہ اگر ابھی نندن کی واپسی نہیں ہوتی تو مخالف جماعتیں شور مچاتیں، حالانکہ کانگریس سمیت تمام جماعتوں نے ابھی نندن کے لیے ’ کینڈل لائٹ‘ تقریب کا انتظام بھی کرلیا تھا۔

بالا کوٹ حملے پر پوچھے گئے سوال کے جواب میں وزیراعظم مودی نے ناراضی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ فیصلہ میرا ذاتی فیصلہ نہیں تھا بلکہ ماہر اور ذمہ دار شخصیات سے مشاورت کے بعد کیا گیا تھا اور اس فیصلے میں سیاسی عمل دخل یا جذباتیت شامل نہیں بلکہ یہ ایک سیکیورٹی اقدام تھا۔

بھارتی وزیراعظم نریندرا مودی ’ٹائمز آف انڈیا‘ کو دیئے گئے اس انٹرویو میں اپنی دور عظمیٰ کی کارکردگی پیش کرنے میں یکسر ناکام نظر آئے جب کہ بھارتی معیشت، قومی حمیت اور تعمیر و ترقی سے متعلق سوالات کے جوابات میں اپوزیشن کو لعن طعن کرتے رہے۔

طالبان سے امن مذاکرات کے التوا پر مایوسی ہوئی، زلمے خلیل زاد

امریکی نمائندہ خصوصی برائے افغان امن عمل زلمے خلیل زاد نے قطر میں طالبان اور افغان وفد کے درمیان مذاکرات ملتوی ہونے پر مایوسی کا اظہار کیا ہے۔

زلمے خلیل زاد نے سماجی روابط کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کیے گئے ٹوئٹ میں کہا کہ ’ قطر میں افغان طالبان مذاکرات میں تاخیر ہونے پر شدید مایوس ہوں ‘۔

انہوں نے کہا کہ ’ بات چیت ہی سیاسی مفاہمت اور دیر پا امن کا راستہ ہے اور رہے گا، اس کا کوئی متبادل نہیں، میں تمام فریقین سے اصرار کرتا ہوں کہ وہ شرکا کی فہرست کو قبول کریں جو تمام افغان شہریوں کے لیے بات کررہی ہے، کسی مدد کی ضرورت ہے تو میں تیار ہوں‘۔

خیال رہے کہ طالبان کی جانب سے افغان حکومتی وفد کے اراکین کی تعداد پر اعتراض کے بعد دونوں فریقین کے درمیان مذاکرات ملتوی کردیے گئے۔

افغانستان میں 17 سالہ طویل ترین جنگ کے خاتمے کے لیے امریکا کی سخت کوششوں کے بعد طالبان افغان حکومتی وفد سے بات چیت پر آمادہ ہوئے تھے۔

افغان حکومت نے 16 اپریل کو طالبان سے ملاقات کرنے والے 250 افراد کی فہرست شائع کی تھی، جس میں افغان صدر اشرف غنی، چیف آف اسٹاف عبدالسلام رحیمی اور انتخابات میں ہارنے والے رہنما امراللہ صالح سمیت افغان انٹیلی جنس کے سابق سربراہ بھی شامل تھے۔

فہرست میں افغانستان کے قبائلی عمائدین، نوجوانوں کے رہنما اور 52 خواتین بھی شامل تھے۔

تاہم طالبان نے اس طویل فہرست پر اعتراض کرتے ہوئے کہا تھا کہ ان کا اتنے زیادہ لوگوں سے ملنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’کابل کی فہرست بنانے والوں کو معلوم ہونا چاہیے کہ یہ ایک پہلے سے طے شدہ خلیجی ممالک میں ہونے والی کانفرنس ہے نہ کہ کابل کے کسی ہوٹل میں ہونے والے کسی کی شادی کی تقریب کا دعوت نامہ‘۔

بعد ازاں افغان صدر اشرف غنی نے 17 اپریل کو تھا کہ افغان وفد میں کچھ حکومتی اراکین ذاتی حیثیت میں شرکت کررہے ہیں۔

لیکن اس گروہ میں افغان سیاست کی اہم شخصیات شامل نہیں جو فورسز کی وجہ سے ستمبر میں صدارتی انتخابات سے قبل اشرف غنی کے ساتھ شامل ہونے سے گریزاں ہیں۔

اس بارے میں ایک سینئر حکومتی کا کہنا تھا کہ افغانوں کے درمیان ہونے والے مذاکرات خطرے میں پڑ گئے ہیں۔

افغان حکام کے مطابق قطر نے 243 افراد کی فہرست پیش کی تھی جو اشرف غنی کی 250 افراد کی فہرست سے مختلف تھی۔

افغان وفد اور طالبان کے درمیان مذاکرات کا آغاز آج قطر کے دارالحکومت دوحہ میں ہونا تھا لیکن کابل میں موجود افغان حکومت کے عہدیدار نے بتایا کہ ’یہ اجلاس ابھی کے لیے ملتوی کردیا گیا ہے اور اس کی تفصیلات میں تبدیلی کی جارہی ہے‘۔

اس بارے میں کابل میں موجود ایک مغربی سفارتکار نے بتایا کہ افغان وفد کو جمعرات کو قطر کے دارالحکومت روانہ ہونا تھا تاہم انہیں معلوم ہوا کہ ان کا دورہ منسوخ کردیا گیا ہے اور نئی تاریخوں پر بات چیت جاری ہے۔

سفارتکار نے شناخت نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ ’حکومت کو یہ اجلاس منعقد کرنے کے لیے وفد میں تبدیلی کرنی پڑے گی‘۔ اس بارے میں طالبان ترجمان ذبیح اللہ مجاہد کا کہنا تھا کہ طالبان کے رہنما افغان وفد کے حجم اور اس میں اراکین کے شمولیت کے حوالے سے معترض تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ وفد میں کچھ ایسے اراکین بھی شامل تھے جو اراکین کی اس فہرست سے مختلف تھے جس پر اتفاق ہوا اور اس میں افغان حکومت کے اہلکار بھی موجود تھے۔

آئرلینڈ میں ہنگاموں کے دوران خاتون صحافی قتل

جزیرہ آئرلینڈ میں جاری سول نافرمانی کی تحریک کے درمیان پُرتشدد مظاہرے کی رپورٹنگ کرنے والی معروف خاتون صحافی کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا گیا۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق آئرلینڈ کے شہر لندن ڈیری میں نامعلوم مسلح افراد نے 29 سالہ خاتون صحافی ’لیرا مککی‘  کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا۔ حملہ آوروں کا تعلق ریپبلکن باغیوں سے ہونے کا امکان ہے۔

خاتون صحافی کو اس وقت گولیاں ماری گئیں جب وہ چند شرپسندعناصر کی تخریب کاریوں کی رپورٹنگ کر رہی تھیں، حملہ آوروں نے خاتون صحافی کی مدد کو آنے والی ایمبولینس پر پٹرول بم پھینک کر نذر آتش کر دیا۔

پولیس نے صحافی کے قتل کو دہشت گردی کا واقعہ قرار دیتے ہوئے آئرش ریپبلکن آرمی کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے۔ پولیس نے عوام سے صبر و تحمل سے کام لینے کی اپیل کی ہے۔ آئرش انتہا پسند لندن ڈیری کو صرف ڈیری کہنے پر بضد ہیں جب کہ دیگر لوگ شہر کو پرانے نام لندن ڈیری کہنے پر مصر ہیں۔

بالا کوٹ میں کوئی پاکستانی فوجی یا شہری جاں بحق نہیں ہوا،سشما سوراج کا اعتراف

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل آصف غفور کا کہنا ہے کہ بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج نے آخر کار سچ بول دیا۔

بھارت کی جانب سے پلوامہ میں 14 فروری کو ہونے والے حملے کا ذمہ دار پاکستان کو قرار دیکر 26 فروری کو پاکستان میں دراندازی کی کوشش کی گئی۔

پاک فضائیہ کے طیاروں نے بھارتی مداخلت کی کوشش کو ناکام بنا دیا تھا لیکن بھارت کا دعویٰ تھا کہ بالاکوٹ حملے میں کئی دہشت گرد اور پاکستانی فوجی ہلاک ہوئے۔

اس کے جواب میں پاکستان نے 27 فروری کو بھارت کو منہ توڑ جواب دیتے ہوئے بھارتی فضائیہ کے دو طیاروں کو تباہ کیا اور بھارتی فضائیہ کے ونگ کمانڈر ابھی نندن کو گرفتار بھی کیا۔

پاکستان کی جانب سے مختلف ممالک کے ملٹری اتاشیوں، غیر ملکی سفیروں اور غیر ملکی صحافیوں کو بالا کوٹ کا دورہ بھی کروایا گیا جہاں کسی قسم کا کوئی جانی و مالی نقصان نہیں ہوا تھا۔

بھارت کی حکمران جماعت بی جے پی کے رہنما انتخابی مہم کے دوران بالا کوٹ حملے کو اپنی تشہیر کے لیے بھی استعمال کرتے رہے جب کہ اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے ثبوت مانگنے کے باوجود بھارتی افواج اور حکمران کسی قسم کا ثبوت عوام اور میڈیا کے سامنے نہ رکھ سکے۔

اب بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج نے بھی بالاکوٹ حملے میں اپنی ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے کہا ہے کہ بالاکوٹ حملے میں کوئی بھی پاکستانی فوجی یا سویلین ہلاک نہیں ہوا تھا۔

بھارتی وزیر خارجہ کے بیان پر ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے سوشل میڈیا پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ بھارتی وزیر خارجہ نے آخر کار سچ بول دیا۔

میجر جنرل آصف غفور نے مزید لکھا کہ زمینی حقائق نے بھارت کو مجبور کر دیا، امید ہے بھارت باقی جھوٹوں سے متعلق بھی سچ بولے گا۔

انہوں نے کہا کہ بھارتی فضائیہ دو طیارے گرائے جانے کی بھارت تردید کرتا رہا، بھارت کا پاک فضائیہ کا ایف 16 طیارہ گرانے کا دعویٰ بھی جھوٹا تھا۔

آصف غفور نے کہا کہ بھارت کا 2016 میں سرجیکل اسٹرائیک کا دعویٰ بھی جھوٹا تھا۔ دیر آید درست آید۔

Maj Gen Asif Ghafoor

@OfficialDGISPR

Finally the truth under ground reality compulsions. Hopefully, so will be about other false Indian claims ie surgical strike 2016, denial of shooting down of 2 IAF jets by PAF and claim about F16. Better late than never.

Times of India

@timesofindia

No Pakistan soldier or citizen died in Balakot air strike: Sushma Swaraj http://toi.in/QpqcSb64 

View image on Twitter
4,233 people are talking about this

بھارت میں عام انتخابات کا دوسرا مرحلہ، مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کا سماں

نئی دلی /  سری نگر: بھارت میں عام انتخابات کے دوسرے مرحلے میں پولنگ کا عمل جاری ہے تاہم مقبوضہ کشمیر میں عوام نے انتخابات کے نام پر ڈھونگ کو مسترد کردیا ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق بھارت میں ایوان زیریں (لوک سبھا) کے انتخابات کے دوسرے مرحلے میں 95 نشستوں پر پولنگ کا عمل جاری ہے۔ ریاست تمل ناڈو کی 38، مہاراشٹرا کی 10، کرناٹکا کی 14، اتر پردیش کی 8، آسام ، بہار اور اڑیسہ کی 5،5، چھتیس گڑھ اور مغربی بنگال کی 3،3 جب کہ مقبوضہ کشمیر کی 2 اور منی پور کی ایک نشست پر پولنگ ہورہی ہے۔

مقبوضہ کشمیر میں انتخابی ڈھونگ مسترد

دوسری جانب مقبوضہ کشمیر کے عوام نے انتخابات کے نام پر رچائے جانے والے ڈھونگ کو مسترد کردیا ہے، حریت رہنماؤں کی اپیل پر نام نہاد انتخابات کا مکمل بائیکاٹ کیا گیا ہے، پولنگ اسٹیشن ویران پڑے ہیں جب کہ وادی میں کرفیو کا سماں ہے۔

رقم کی تقسیم پر انتخاب ملتوی

بھارت کی مختلف ریاستوں میں سیاسی جماعتوں اور امیدواروں کی جانب سے ووٹرز کو لبھانے کے لیے شراب، ملبوسات، سونے کے زیور اور نقد رقم کی تقسیم بڑے پیمانے پر ہوتی ہے، بھارتی ریاست تمل ناڈو کے حلقہ ویلور میں نقد رقم بانٹنے پر انتخاب ملتوی کردیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ لوک سبھا کے انتخابات کا پہلا مرحلہ 11 اپریل کو ہوا تھا جس میں 20 ریاستوں کی 91 نشستوں پر ووٹنگ ہوئی تھی۔

پیرو کے سابق صدر کی گرفتاری سے بچنے کے لیے خودکشی

لیما: لاطینی امریکی ملک پیرو کے سابق صدر نے گرفتاری سے بچنے کے لیے خودکشی کرلی۔

غیر ملکی خبر ایجنسی کے مطابق  ایلن گارسیا 1985 سے 1990 اور 2006 سے 2011 تک پیرو کے صدر رہے تھے۔ ان کو بدعنوانی کے الزامات کا سامنا تھا اور ان پر الزام تھا کہ انہوں نے برازیلی تعمیراتی کمپنی کو ملک میں بڑے پیمانے پر سرکاری کاموں کے ٹھیکوں کے عوض اس سے رشوت وصول کی تھی۔

پولیس گارسیا کو گرفتار کرنے پہنچی تو انہوں نے خود کو گولی مارلی جس کے بعد گارسیا کو شدید زخمی حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ انتقال کرگئے۔

پیرو کے دفتر استغاثہ کے مطابق وارنٹس کے تحت گارسیا کو 10روز کے لیے زیر حراست رکھا جاسکتا تھا جس کے دوران ان کے خلاف شواہد جمع کئے جانے تھے، اس کے علاوہ ان کو گرفتار کئے جانے کا مقصد انہیں ملک سے فرار ہونے سے روکنا بھی تھا۔

بھارتی بحریہ کا جنگی ہیلی کاپٹر سمندر میں گر کر تباہ

نئی دلی: بھارتی بحریہ کا ایک جنگی ہیلی کاپٹر سمندر میں گر کر تباہ ہو گیا تاہم ہیلی کاپٹر میں سوار تینوں اہلکاروں نے چھلانگ لگا کر اپنی جانیں بچائیں۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق بھارتی بحریہ کا ہیلی کاپٹر بحیرہ عرب میں گر کر تباہ ہوگیا، ہیلی کاپٹر میں موجود پائلٹ نے عملے کے دو اراکین کے ساتھ پیرا شوٹ کی مدد سے چھلانگ لگا کر اپنی جان بچائی جنہیں سمندر سے بحفاظت نکال لیا گیا۔

بھارتی بحریہ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ جنگی ہیلی کاپٹر بحریہ عرب میں تعینات تھا جس میں معمول کی پرواز کے دوران فنی خرابی پیدا ہوگئی، تینوں اہلکار بروقت چھلانگ لگا کر خود کو بچانے میں کامیاب رہے۔ ہیلی کاپٹر حادثے کی وجہ کا تعین کرنے کے لیے تفتیشی کمیٹی تشکیل دے دی گئی ہے۔

واضح رہے کہ بھارت کے فضائی اور بحری بیڑوں میں موجود طیاروں اور ہیلی کاپٹرز کی مسلسل گرتی کارکردگی اور پائلٹس کے غیر پیشہ ورانہ رویے کے باعث حادثات میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ مگ طیاروں کے گرنے کے بعد اب ہیلی کاپٹر بھی حادثے کا شکار ہو رہے ہیں۔

بھارت میں طوفان اور تیز بارشوں میں 35 افراد ہلاک

نئی دلی: بھارت کی مختلف ریاستوں میں طوفانِ باد و باراں سے 35 افراد ہلاک ہوگئے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق بھارت کے وسطی اور مغربی علاقوں میں زور دار گرد آلُود طوفان کے ساتھ موسلا دھار بارش اور آسمانی بجلی گرنے کے مختلف واقعات میں 35 افراد ہلاک ہوگئے جب کہ 50 سے زائد زخمی ہیں۔

طوفانِ باد و باراں میں سب سے زیادہ راجستھان، مدھیہ پردیش اور گجرات کی ریاستیں متاثر ہوئیں، سب سے زیادہ ہلاکتیں 15 مدھیہ پردیش میں ہوئیں جب کہ ریاست راجھستان اور گجرات میں 10، 10 افراد ہلاک ہوئے، زیادہ تر جانی نقصان آسمانی بجلی گرنے سے ہوئیں جب کہ لینڈ سلائیڈنگ میں درجنوں گھر تباہ ہوگئے۔

طوفان اور بارشوں کے تازہ لہر کے بعد متاثرہ ریاستوں کے اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے، ایمبولینس کے ذریعے زخمیوں کو اسپتال منتقل کردیا گیا ہے جب کہ ریسکیو اداروں کو متحرک کر دیا گیا ہے۔ سڑکوں پر گرنے والے درختوں، بل بورڈز اور کھمبوں کو ہٹایا جا رہا ہے۔

واضح رہے کہ موسمی تغیرات کے باعث بھارت کو گزشتہ برس بھی ایسے ہی ہلاکت خیز طوفان اور موسلا دھار بارشوں کا سامنا کرنا پڑا تھا جس کے باعث شمالی بھارتی ریاستوں میں 125 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

Google Analytics Alternative