- الإعلانات -

ٹرمپ نے کورونا ٹیسٹنگ کو ‘دو دھاری تلوار’ قرار دے دیا

امریکا کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کووڈ 19 ٹیسٹنگ کو کم کرنے پر زور دیتے ہوئے کہ ‘یہ دو دھاری تلوار’ ہے جس کی وجہ سے مزید کیسز منظر عام پر آرہے ہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے اوکلاہوما کے علاقے تلسا میں ایک انتخابی ریلی میں کورونا وائرس کے وبائی امراض پر بات کرتے ہوئے کہا کہ اب امریکا میں ڈھائی کروڑ افراد کے کورونا ٹیسٹ ہوئے جو دوسرے ممالک سے کہیں زیادہ ہے۔

انہوں نے ‘جب کورونا ٹیسٹنگ ہوتی رہے گی تو کیسز منظر عام پر آتے رہیں گے تو اس لیے میں نے اپنے لوگوں سے کہا کہ براہ کرم کورونا ٹیسٹنگ کو کم کریں’۔

واضح رہے کہ امریکی صدر کی انتخابی ریلی میں شریک ہزاروں لوگ چہرے پر ماسک نہیں پہنے ہوئے تھے۔

علاوہ ازین انہوں نے کورونا وائرس سے متعلق بات کرتے ہوئے نسل پرست زبان کا استعمال کیا اور وائرس کو ‘کنگ فلو’ قرار دیا۔

اس سے قبل وہ کورونا کو ‘ووہان وائرس’ اور ‘چینی وائرس’ کہہ چکے ہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ تاریخ میں کسی وائرس کے اتنے نام نہیں ہوں گے، میں ایسے ‘کنگ فلو’ کا نام دے سکتا ہوں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ‘میں 19 مختلف نام دینے کی صلاحیت رکھتا ہوں’۔

امریکی صدر کی جانب کورونا ٹیسٹنگ میں کمی لانے سے متعلق سوال کے جواب میں وائٹ ہاؤس کے ایک عہدیدار نے بتایا کہ ‘ٹرمپ یہ بات مزاق میں کہی’۔

انہوں نے مزید کہا کہ ‘وہ بالکل مذاق کر رہے تھے، ہم کورونا ٹیسٹنگ میں سب سے آگے ہیں اور اب تک ڈھائی کروڑ لوگوں کے ٹیسٹ کیے جاچکے ہیں۔

علاوہ ازیں ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ چین اور یورپ سے آنے والے مسافروں کو روکنے کے اقدامات سے ‘سیکڑوں ہزاروں جانوں’ کو بچانے میں مدد ملی ہے۔

: امریکا کورونا وائرس کے پیشِ نظر نافذ لاک ڈاؤن کے خلاف سیکڑوں افراد کا احتجاج

لیکن انہوں نے کہا کہ ‘فیک نیوز’ میڈیا نے ان کے اقدام کی حوصلہ افزائی نہیں کی جبکہ وبا سے متعلق میرا ردعمل ‘ایک غیر معمولی کام’ تھا۔

خبر رساں ادارے ‘رائٹرز’ کے مطابق کووڈ 19 کی وجہ اب تک ایک لاکھ 19 ہزار امریکی ہلاک ہوچکے ہیں۔

علاوہ ازیں متعدد ریاستوں میں کورونا وائرس کے کیسز میں اضافے کی وجہ سے ہسپتالوں میں مریضوں کی شرح میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے۔

حالیہ سروے کے مطابق 86 فیصد امریکیوں نے کووڈ 19 کے پھیلاؤ پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔