- الإعلانات -

سعودی عرب میں خاتون ڈرائیور کو پریشان کرنے کا واقعہ

جدہ(نیوزڈسک) سعودی عرب میں 24 جُون 2018ء کا دِن ایک تاریخی دِن تھا۔ اس روز سعودی خواتین پر چار عشروں سے عائد ڈرائیونگ پر پابندی ہٹا لی گئی۔جس کے بعد لاکھوں خواتین سعودی مملکت کے طول و عرض میں اپنی گاڑیاں دوڑاتی نظر آتی ہیں۔ اب تک ایک لاکھ سے زائد خواتین ڈرائیونگ لائسنس حاصل کر چکی ہیں۔ چونکہ سعودی خواتین ماضی میں ڈرائیونگ کا تجربہ نہیں رکھتیں، اس وجہ سے ابتداء میں سعودی خواتین کو بہت سے ٹریفک حادثات کا سامنا کرنا پڑا جن میں کئی انسانی جانوں کا ضیاع بھی ہوا۔

سعودی خواتین ڈرائیورز کو اکثر پریشان کرنے کے واقعات پیش آتے ہیں۔ ایسا ہی ایک تازہ واقعہ جدہ میں بھی پیش آیا ہے جس کی ویڈیو بھی سامنے آ گئی ہے۔ ایک سعودی خاتون نے ٹویٹر پر اپنی ایک ویڈیو شیئر کی جس میں ایک شخص اسے ڈرائیونگ کرتا دیکھ کر اوچھی حرکتوں پر اُتر آیا۔

ویڈیو میں دکھایا گیا کہ یہ شخص بار بار اپنی گاڑی خاتون کی گاڑی کے آگے لاتا، اور پھر بار بار رفتار کم کر دیتا، جس سے خاتون کو اچانک بریک لگانا پڑتی اور اس گاڑی حادثے سے بال بال بچتی رہی۔

خاتون کی گاڑی میں اس کے بچے بھی سوار تھے۔ یہ شخص اسے خاصی دیر تک ہراساں کرتا رہا۔ ویڈیو دیکھ کر سعودی عوام نے بہت غصے کا اظہار کیا اور اس نامعلوم شخص کی جانب سے خاتون کو پریشان کرنے پراس کی گرفتاری کا مطالبہ بھی کیا۔ سعودی محکمہ ٹریفک نے بھی اس ویڈیو کا نوٹس لیتے ہوئے مذکورہ گاڑی کے ڈرائیور کی شناخت کرنے کے بعد اسے جدہ سے گرفتار کر لیا ہے۔ محکمہ ٹریفک کے مطابق یہ واقعہ جدہ، مکہ اولڈ روڈ پر پیش آیا ہے۔ گرفتار ڈرائیور کو ٹریفک بورڈ کے حوالے کیا گیا ہے جو تفتیش مکمل ہونے کے بعد اس پر سزا اور جرمانے کا اعلان کرے گا۔