- الإعلانات -

مسجد الحرام میں معذوروں اور بزرگوں کا طواف صرف 15 منٹ میں مکمل ہونے لگا

کورونا کی وبا کے بعد سعودی حکومت نے کئی ماہ تک عمرہ کی سرگرمیاں محدود کر رکھی تھیں۔ جبکہ حج کی سعادت بھی اس بار چند ہزار لوگ ہی حاصل کر پائے۔ اگرچہ عمرہ پر سے پابندی مرحلہ وار ہٹالی گئی ہے تاہم ابھی تک عمرہ زائرین کو بڑی گنتی میں آنے کی اجازت نہیں دی گئی ۔ اس محدود گنتی کا مقصد حرم شریف میں کورونا سے متعلق ایس او پیز پر عمل کروا نا ہے۔

مسجد الحرام اور مسجد نبوی کا انتظام سنبھالنے والی کمیٹی نے معذوروں اور معمر افراد کے لیے طواف میں بہت بڑی آسانی پیدا کر دی ہے، جس کے باعث یہ لوگ اب صرف پندرہ منٹ میں اپنا طواف مکمل کر پا رہے ہیں۔ اُردو نیوز کے مطابق جنرل پریذیڈنسی نے معمرافراد کو وہیل چیئرز کیلیے ذریعے طواف کرانے کے لیے 155 میٹر لمبی لائن بنا دی ہے جس پر بیک وقت 45 وہیل چیئرز چلائی جا سکتی ہیں۔

مذکورہ سہولت کی وجہ سے معمر اور بیمار حضرات 10 سے 15 منٹ میں طواف مکمل کرلیتے ہیں۔جنرل پریذیڈنسی نے معذوروں کیلیے دوسری لائن مختص کی ہے یہ 145 میٹر طویل ہے۔ یہ خانہ کعبہ کے زیادہ قریب ہے۔یہ ایسے افراد کے طواف کیلیے مختص ہے جنہیں وہیل چیئر کی ضرورت نہیں ہوتی۔ اس سے 50 افراد بیک وقت کسی دشواری کے بغیر طواف کرنے لگے ہیں۔جنرل پر یذیڈنسی کے قافلہ سازی امور کے انچارج اسامہ الحجیلی نے بتایا کہ تمام انتظامات سربراہ اعلیٰ ڈاکٹر عبدالرحمن السدیس کی ہدایت پر کیے گئے ہیں۔ ان کے حکم پر معذور اور بوڑھوں کے لیے خانہ کعبہ کے اطراف سپیشل لائنیں بنائی گئی ہیں۔ بزرگ اور معذور عمرہ زائرین نے خانہ کعبہ کے طواف میں مذکورہ سہولت کی فراہمی پر انتظامیہ کا شکریہ ادا کیا۔