- الإعلانات -

کویت : غیرملکیوں کی رہائش کا مسئلہ نئی صورت اختیار کرگیا

کویت سٹی : کویت میں روزگار کیلئے جانے والے غیرملکیوں کے حوالے سے کویتی پارلیمان کے ممبر نے نیا قانون پیش کرنے پر کہا ہے کہ ہم اس کی اجازت ہرگز نہیں دیں گے۔ تفصیلات کے مطابق کویتی پارلیمنٹ کے ممبر بدر الحمیدی نے”غیرملکیوں کی رہائش” سے متعلق نئی رپورٹ سے اختلاف کیا ہے جسے پارلیمانی داخلہ اور دفاعی کمیٹی نے پیش کیا۔

انہوں نے کہا کہ ہم کویت کا استحصال کرنے اور داخلہ اور دفاعی کمیٹی کی جانب سے غیرملکیوں کیلئے منظور شدہ وزٹ پرمٹ کے ذریعے تین ماہ کی بجائے ایک سال کی مدت کے لئے ملک میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دیں گے۔ الحمیدی نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ وزٹ کے دورانیے کو تبدیل کرنے سے میونسپل خدمات، سڑکوں اور اسپتالوں پر دباؤ پڑے گا جس کی ہم اجازت نہیں دیں گے۔

ہم غیرملکیوں کے نئے قانون کی اجازت نہیں دیں گے: ممبر کویت پارلیمنٹ انہوں نے کہا کہ اس قانون کو منظور نہیں کیا جائے گا جس میں بہت سی غلطیاں ہیں جو مجموعی طور پر کویتی معاشرے کو متاثر کرتی ہیں اور عام طور پر یہ دورہ 15 دن سے زیادہ نہیں ہونا چاہیے اور نہ ہی اس کی تجدید ہونی چاہیے۔

ایک متعلقہ سطح پر الحمدی نے کہا کہ ایسی معلومات ہیں جو حکام تک پہنچنی چاہییں، ہم ایک قانون پیش کریں گے جس میں تمام ممالک پر ویزا اور رہائش کے اخراجات کے بغیر ملک میں داخلے کے لیے رقم عائد کی جاتی ہے جیسا کہ لبنان میں ہوتا ہے جب خلیج تعاون کونسل کا کوئی شہری رہائش کے لیے درخواست دیتا ہے تو 70,000ڈالر کی بینک گارنٹی بینک میں جمع کرنا ضروری ہونا چاہیے۔

رہائش ایک سال کے لیے نئی گارنٹی کے ساتھ قابل تجدید ہو جب آپ سیاحت کے لیے لبنان میں داخل ہوتے ہیں تو آپ کو6 ماہ کی مہلت دی جاتی ہے اور پھر اپنے ملک واپس جانا ہوتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ تضاد یہ ہے کہ کام کی غرض سے جو بھی خلیج تعاون کونسل کے ممالک میں داخل ہوتا ہے وہ ایک علامتی رقم ادا کرتا ہے اور اس کے بدلے میں اپنے خاندان اور کارکنوں کی ضمانت دیتا ہے۔