جرائم

کراچی میں ایک ماہ کے دوران ڈکیتی مزاحمت پر 19 شہری قتل، درجنوں زخمی

کراچی میں ڈاکو راج برقرار، ڈکیتی میں مزاحمت پر ایک اور شہری قتل

کراچی: شہرقائد میں پولیس بے رحم اسٹریٹ کرمنلز کو نکیل ڈالنے میں ناکام ہوگئی۔ شہرمیں گزشتہ ماہ مئی کے دوران 19 شہری ڈکیتی مزاحمت پر قتل اور درجنوں زخمی کردیے گئے۔عروس البلاد میں بڑھتے اسٹریٹ کرائم کے مقابلے میں کراچی پولیس اپنی رٹ قائم کرنے میں ناکام دکھائی دیتی ہے جب کہ بے لگام ڈاکو آزادانہ طور پر شہریوں سے لوٹ مار اور انہیں جان سے مارنے و زخمی کرنے سے بھی دریغ نہیں کر رہے۔گزشتہ ماہ مئی کے مہینے میں ڈاکوؤں کی سفاکانہ فائرنگ سے جاں بحق ہونے والوں میں باپ ، بیٹا ، پولیس اہل کار ، دکان دار ، محنت کش اور دیگر شہری شامل ہیں۔مئی میں سب سے زیادہ واقعات ڈسٹرکٹ ایسٹ میں پیش آئے، جن میں ڈکیتی مزاحمت پر 2 پولیس اہل کاروں سمیت 7 شہریوں کو قتل کیا گیا ۔ڈسٹرکٹ ویسٹ میں بے لگام ڈاکوؤں نے 6 شہریوں کی جان لی ڈسٹرکٹ کیماڑی اور ڈسٹرکٹ سینٹرل میں ڈکیتی مزاحمت پر ڈاکوؤں نے 22 شہریوں کو ابدی نیند سلا دیا جب کہ ڈسٹرکٹ کورنگی میں ڈکیتی مزاحمت پر ڈاکوؤں نے پہلے بیٹے کو اور ایک ہفتے کے بعد اس کے باپ کو بھی فائرنگ کر زندگی سے محروم کر دیا۔ڈسٹرکٹ ساؤتھ اور ڈسٹرکٹ سٹی میں ڈکیتی مزاحمت پر قتل کی کوئی واردات رپورٹ نہیں ہوئی ۔گزشتہ ماہ مئی کے اعداد شمار کے مطابق 30 اپریل اور یکم مئی کی درمیانی شب گلشن اقبال بلاک 11 میں ڈاکوؤں کی فائرنگ سے کیبن کا مالک 30 سالہ احسن جاں بحق ہوا ۔4 مئی کو منگھوپیر کے علاقے اورنگی ٹاؤن الطاف نگر 100 فٹ روڈ پر ڈکیتی کی واردات کے دوران مزاحمت پر ایم کیو ایم پاکستان کے یوسی کمیٹی کے ممبر 52 سالہ عبدالسلام کو فائرنگ کر کے قتل کیا گیا ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے