- الإعلانات -

ساڑھے 7 کروڑ کی رقم چرانے والی گھریلو ملازمہ گرفتار

یروت: لبنان میں ایک گھریلو ملازمہ کو 50 ہزار ڈالرز چوری کرنے کے الزام میں گرفتار کرلیا گیا ہے، مقامی کرنسی میں یہ رقم ساڑھے 7 کروڑ لبنانی پاؤنڈز سے زیادہ بنتی ہے۔

لبنان میں مقامی پولیس نے ایک گھریلو ملازمہ کو اپنے مالک کے کیس سے 50 ہزار ڈالر چوری کرنے کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔

کہا جارہا ہے کہ جب سے لبنان کے شدید معاشی بحران نے لبنیز پاؤنڈ کی قدر کو تباہ کیا ہے اور بینکوں نے ڈالر نکالنے پر پابندی لگا دی ہے، یہ نقدی کی سب سے بڑی چوری ہے۔

انٹرنلی سکیورٹی فورس (آئی ایس ایف) کے مطابق کیمرون سے تعلق رکھنے والی ملازمہ نے، جو بیروت کے رہائشی شخص کے پاس کام کرتی تھیں، پیسے چرانے اور 17 مارچ کو فرار ہونے کا الزام قبول کیا ہے۔

اس حوالے سے آئی ایس ایف کے ایک سینیئر اہلکار کا کہنا ہے کہ سنہ 2019 سے شروع ہونے والے لبنان کے معاشی اور ڈالر کی کمی کے بحران کے بعد چرائی جانے والی یہ نقد رقم اگر سب سے بڑی نہیں تو پھر بھی بہت بڑی چوریوں میں سے ایک ہے۔

معاشی تباہی کے دوران اس معاملے نے لبنان میں گھریلو ملازمین کی حالت زار کی طرف بھی اشارہ کیا ہے، زیادہ تر ملازمین لبنان میں کام کرنے جاتے ہیں تاکہ اپنے گھر والوں کو ڈالرز بھیج سکیں۔

سنہ 2019 سے لبنان کے مرکزی بینک نے بینکوں پر دباؤ کم کرنے کے لیے ڈالرز نکلوانے اور ٹرانسفر کرنے پر پابندی عائد کر دی تھی جس کے نتیجے میں ڈالر کی شدید کمی ہو گئی۔

اس بحران کی وجہ سے بہت سے لبنانی شہریوں نے اپنی رقم بینکوں سے نکال کر گھروں میں محفوظ کرلی تھیں، ماہرین کے خیال میں لوگوں نے اپنی جائیدادوں میں 3 ارب ڈالر کی رقم چھپائی ہوئی ہے۔

آئی ایس ایف کے اہلکار کے مطابق سنہ 2019 سے لبنان میں نقد ڈالر کی چوری کی متعدد وارداتیں ہوئی ہیں لیکن یہ واردات ان میں سب سے بڑی ہے۔

پولیس نے کیمرون سے تعلق رکھنے والی اس ملازمہ سے 4 ہزار ڈالر، 60 لاکھ لبنانی پاؤنڈز، 6 ہزار ڈالر گھر بھیجنے کی رسیدیں اور ایک نیا اسمارٹ فون برآمد کر لیا ہے۔