پاکستان معیشت و تجارت

بحیرہ احمر میں سمندری تجارت میں حائل رکائوٹیں پاکستانی معیشت کیلئے خطرہ

بحیرہ احمر میں سمندری تجارت میں حائل رکائوٹیں پاکستانی معیشت کیلئے خطرہ

تجارت کی راہ میں حائل رکاوٹیں پاکستان کی معیشت کے لیے خطرہ بن گئی ہیں، بحیرہ احمر سے سپلائی میں رکاوٹ طول پکڑی گئی تو مہنگائی پر قابو پانے کی پاکستان کی کوششیں متاثر ہو سکتی ہیں۔ رپورٹ کے مطابق پاکستان کی 90 فیصد عالمی تجارت سمندر کے راستے ہوتی ہے۔ ہے بحیرہ احمر پاکستان کا امریکہ، برطانیہ اور یورپی یونین کے ساتھ سب سے اہم تجارتی راستہ ہے۔ عالمی تجارت کے لیے پاکستان کا بہت زیادہ انحصار بحیرہ احمر پر ہے، جہاں سے پاکستان کی 60% برآمدات اور 30% درآمدات گزرتی ہیں، جن کی مالیت بالترتیب 16.3 بلین ڈالر ہے۔ اور 23.2 بلین ڈالر ہیں۔ بحیرہ احمر ایشیا اور یورپ کے درمیان مختصر ترین سمندری تجارتی راستہ ہے، جس میں کیپ آف گڈ ہوپ کو چھوڑ کر، 3,500 سمندری میل کا اضافی فاصلہ ہے، جسے طے کرنے میں 10 سے 12 دن لگتے ہیں۔وزارت خزانہ کے مطابق اس اہم تجارتی راستے میں تعطل کے پاکستان کی معیشت پر کثیر جہتی منفی اثرات مرتب ہورہے ہیں، جن میں بنیادی اشیا کی درآمد میں تاخیر، خام مال اور تیار مصنوعات کی سپلائی میں تاخیر جس سے مقامی سپلائی چین بگڑ رہی ہے۔ درآمدی خام مال کی ترسیل میں تاخیر سے پیداواری عمل سست روی کا شکار ہے جس سے لارج اسکیل مینوفیکچرنگ کی نمو متاثر ہورہی ہے۔پاکستان کی ایکسپورٹ میں 60 فیصد کا حصہ رکھنے والا ٹیکسٹائل کا شعبہ سب سے زیادہ متاثر ہورہا ہے۔ خام مال اور مشینری کی بروقت دستیابی ٹیکسٹائل اور اپیرل پروڈیوسرز کے لیے ناگزیر ہے اور شپنگ شیڈول میں کسی قسم کی تبدیلی کے نتیجے میں پیداواری تاخیر اور لاگت میں اضافے کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

güvenilir kumar siteleri