کالم

ثقافتی سرگرمیوں کا فروغ

مدین سوات کے المناک واقعے نے واقعی پاکستان کے معاشرے کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔ پاکستان میں ایسے واقعات اکثر رونما ہوتے ہیں جس سے ہجومی انصاف کا ماحول پیدا ہوتا ہے۔ یہ بالکل ناقابل قبول ہے۔ پولیس نے اس مبینہ شخص کو بار میں لانے کے لیے حراست میں لے لیا، لیکن ہجوم نے قانون کو ہاتھ میں لے کر اسے قتل کردیا۔ اس ذہنیت سے حکومت کو سنجیدگی سے نمٹنے کی ضرورت ہے۔ حالیہ برسوں میں، پاکستان مذہبی انتہا پسندی کے عروج سے دوچار ہے، انتہاپسند گروہ تشدد کی کارروائیاں کرتے ہیں اور ملک بھر میں اپنے نظریات پھیلاتے ہیں۔ اس سے نہ صرف معصوم جانیں ضائع ہوئیں بلکہ بین الاقوامی سطح پر ملک کی شبیہ کو بھی نقصان پہنچا۔ اب وقت آگیا ہے کہ پاکستان ثقافتی سرگرمیوں کو فروغ دے کر اور مذہبی انتہا پسندی کے اثر و رسوخ کا مقابلہ کرنے کے لیے اپنی نرم طاقت کو بروئے کار لاتے ہوئے اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے ایک مختلف انداز اختیار کرے۔ پاکستان میں مذہبی انتہا پسندی کے بڑھنے کی ایک بڑی وجہ ثقافتی اظہار اور مشغولیت کے مواقع کی کمی ہے۔ قدامت پسندی کے غلبے نے ملک میں آرٹ، موسیقی اور ثقافتی اظہار کی دیگر اقسام کی ترقی کو روک دیا ہے۔ اس سے ایک خلا پیدا ہوا ہے جسے انتہا پسند گروہوں نے پر کیا ہے جو افراد کو بھرتی کرنے اور بنیاد پرست بنانے کے لیے مذہب کو ایک ہتھیار کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ ثقافتی سرگرمیوں کو فروغ دے کر اور نوجوانوں کو فنون لطیفہ میں مشغول ہونے کے مواقع فراہم کر کے پاکستان مذہبی انتہا پسندی کے اثرات کا مقابلہ کر سکتا ہے۔ فن اور ثقافت میں متنوع پس منظر کے لوگوں کو متاثر کرنے، تعلیم دینے اور متحد کرنے کی طاقت ہے۔ ثقافتی پروگراموں میں سرمایہ کاری کر کے اور فنکاروں کی مدد کر کے، پاکستان اپنے شہریوں کے درمیان اتحاد اور تعلق کا احساس پیدا کر سکتا ہے، اس طرح انتہا پسندانہ نظریات کی اپیل کو کم کیا جا سکتا ہے۔ ثقافتی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے علاوہ، پاکستان کو انتہا پسندی کے اثر و رسوخ کا مقابلہ کرنے کے لیے اپنی نرم طاقت کو بھی استعمال کرنے کی ضرورت ہے۔ نرم طاقت سے مراد غیر جبر کے ذرائع جیسے ثقافتی تبادلے، سفارت کاری اور میڈیا کے ذریعے دوسروں کی ترجیحات کو تشکیل دینے کی ملک کی صلاحیت ہے ۔ پاکستان کے پاس ایک بھرپور ثقافتی ورثہ ہے جسے دوسرے ممالک کے ساتھ مثبت تعلقات استوار کرنے اور عالمی سطح پر ملک کے مزید مثبت امیج کو فروغ دینے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ انتہا پسندی کا مقابلہ کرنے کے لیے پاکستان اپنی نرم طاقت کا استعمال کرنے کا ایک طریقہ ثقافتی سفارت کاری ہے۔ ثقافتی سفارت کاری میں ممالک کے درمیان افہام و تفہیم کو فروغ دینے اور تعلقات استوار کرنے کے لیے ثقافتی تبادلے اور تعاون کا استعمال شامل ہے۔ ثقافتی تقریبات کی میزبانی کرکے، بین الاقوامی فنکاروں کو پاکستان میں پرفارم کرنے کیلئے مدعو کرکے، اور اپنے ثقافتی ورثے کو دنیا کے سامنے پیش کرکے،پاکستان دوسرے ممالک کےساتھ پل بنا سکتا ہے اور انتہا پسندی سے منسلک منفی دقیانوسی تصورات کا مقابلہ کرسکتا ہے۔ پاکستان میڈیا کے ذریعے انتہا پسندانہ نظریات کا مقابلہ کرنے کے لیے اپنی سافٹ پاور بھی استعمال کر سکتا ہے۔ میڈیا رائے عامہ کی تشکیل میں ایک اہم کردار ادا کرتا ہے اور اسے انتہا پسندانہ بیانیے کو چیلنج کرنے اور رواداری اور شمولیت کے پیغام کو فروغ دینے کےلئے ایک آلے کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔ تنوع اور رواداری کو فروغ دینے والے میڈیا آو¿ٹ لیٹس کی حمایت کرکے، پاکستان انتہا پسندانہ پروپیگنڈے کے اثر و رسوخ کا مقابلہ کر سکتا ہے اور ملک کے مزید مثبت امیج کو فروغ دے سکتا ہے۔ یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ ثقافتی سرگرمیوں کو فروغ دینا اور صرف سافٹ پاور کا استعمال ہی پاکستان میں مذہبی انتہا پسندی کا مقابلہ کرنے کیلئے کافی نہیں ہوگا۔ حکومت، سول سوسائٹی اور مذہبی رہنما سب کو اس مسئلے کو حل کرنے میں اپنا کردار ادا کرنا ہے۔ حکومت کو غربت، تعلیم کی کمی اور سیاسی عدم استحکام سمیت انتہا پسندی کی بنیادی وجوہات سے نمٹنے کےلئے ٹھوس اقدامات کرنے چاہئیں۔ سول سوسائٹی کو رواداری اور شمولیت کو فروغ دینے کے لیے کام کرنا چاہیے، جب کہ مذہبی رہنماں کو انتہا پسندانہ نظریات کے خلاف آواز اٹھانا چاہیے اور امن اور اتحاد کے پیغام کو فروغ دینا چاہیے۔ پاکستان کو مذہبی انتہا پسندی کی صورت میں ایک سنگین چیلنج کا سامنا ہے جس کے ملک اور اس کے عوام پر تباہ کن اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ ثقافتی سرگرمیوں کو فروغ دے کر اور اپنی نرم طاقت کو بروئے کار لا کر، پاکستان انتہا پسند نظریات کے اثرات کا مقابلہ کر سکتا ہے اور ایک زیادہ جامع اور روادار معاشرے کی تعمیر کر سکتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

güvenilir kumar siteleri