اداریہ کالم

عید الاضحی کا درس اور اتحاد امت

مکہ مکرمہ کے امام شیخ مہر المعقلی نے ہفتے کے روز مسجد نمرہ میں خطبہ حج دیا، جس میں امت پر زور دیا کہ وہ اپنی صفوں میں اتحاد اور ہم آہنگی پیدا کریں۔دنیا بھر سے لاکھوں مسلمان حجاج کرام نے ہفتہ کے روز میدان عرفات میں حج کا رکن اعظم وقوفِ عرفات ادا کیا جو حج کا بام عروج ہوتاہے۔دنیا بھر سے آنے والے حجاج نے مکہ مکرمہ سے تقریبا 20 کلومیٹردور ایک پہاڑی پر چڑھ کر پیغمبر اسلامﷺنے اپنا آخری خطبہ دیا۔ مسجد نمرہ میں خطبہ دیتے ہوئے امام شیخ ڈاکٹر مہر المعقیلی نے مسلمانوں کو اتحاد قائم کرنے کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ یہ کسی بھی قسم کی تفرقہ بازی اور تفرقہ کو ٹالنے کے ساتھ ساتھ یقینا امت کی نجات کا باعث بنے گا۔عید الاضحی، قربانی کا تہوار حج کے اختتام کی طرف اشارہ کرتا ہے، مکہ کی سالانہ زیارت۔ جیسے جیسے عید الاضحی قریب آتی ہے، دنیا بھر کے مسلمانوں کے دلوں میں گہری امید کا احساس بھر جاتا ہے۔ یہ خوشی کا تہوار حضرت ابراہیم علیہ السلام کا خدا پر اٹل ایمان کی یاد دلاتا ہے۔ ان کے ایمان کے آخری امتحان کو قرآن پاک میں تفصیل سے بیان کیا گیا ہے۔ اپنے بیٹے کو قربان کرنے کے لیے خواب میں خدا کی طرف سے حکم دیا گیا، حضرت ابراہیم ؑ نے اپنے سب سے عزیز بیٹے کو کو حکم الہٰی میں قربان کرنے کے لیے غیر متزلزل اطاعت اور رضامندی کا مظاہرہ کیا۔ قربانی کی علامت کثیر جہتی ہے۔جانور ہماری دنیاوی املاک اور خواہشات کی نمائندگی کرتا ہے، جسے ہم خدا کی خاطر قربان کرنے کو تیار ہوتے ہیں۔ قربانی کے گوشت کو خاندان، دوستوں اور کم نصیبوں کے ساتھ بانٹنے کا عمل ہمدردی اور سخاوت کے جذبے کو ابھارتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ عید الاضحی کا صلہ ایک فرد سے بہت آگے تک پھیلا ہوا ہے۔ یہ کمیونٹی کے جذبے کے گہرے احساس کو فروغ دیتا ہے، مسلمانوں پر زور دیتا ہے کہ وہ ضرورت مندوں تک پہنچیں اور ان کی مدد کریں۔ قربانی کا عمل عظیم تر بھلائی کے لیے کسی قیمتی چیز کو ترک کرنے کے لیے ہماری رضامندی کی علامت ہے۔ہماری روزمرہ کی زندگیوں میں، یہ ضرورت مندوں کی مدد کےلئے اپنے وقت اور وسائل کو قربان کرنے کا ترجمان ہے، دوسروں کی ضروریات کو اپنی ضروریات سے پہلے رکھ کر اس عمل کی ادائیگی ہے اس کی اصل روح ہے۔ او آئی سی اکنامک آو¿ٹ لک رپورٹ کے مطابق اسلامی تعاون تنظیم او آئی سی کے رکن ممالک کی مشترکہ جی ڈی پی 24.4 ٹریلین ڈالر پر کھڑی ہے۔ تاہم، یہ دولت غیر مساوی طور پر تقسیم کی جاتی ہے، بہت سی مسلم اکثریتی قومیں نمایاں غربت اور مختلف مسائل سے دوچار ہیں۔ عید الاضحی ایک طاقتور یاد دہانی کے طور پر کام کرتی ہے کہ یہ دولت ایک ذمہ داری رکھتی ہے ۔ایک ذمہ داری ہے کہ ہم اپنے وسائل کو استعمال کریں، خواہ وہ مالی ہوں یا دوسری صورت میں، ہماری کمیونٹیز اور پوری دنیا کی بہتری اور غربت، بھوک، جیسے عالمی چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے۔ اس اجتماعی انسان دوستی کے جذبے کو بروئے کار لاتے ہوئے، مسلم کمیونٹیز ایک زیادہ منصفانہ اور منصفانہ دنیا کی تشکیل میں اہم کردار ادا کر سکتی ہیں۔مادر وطن میں مسلم کمیونٹیز عید الاضحی کے موقع پر بڑے پیمانے پر خیراتی اقدامات کا اہتمام کرتی ہیں۔ یہ کوششیں نہ صرف اندرونی بندھنوں کو مضبوط کرتی ہیں بلکہ وسیع تر سماج کے لیے ہمدردی اور شمولیت کا پیغام بھی پیش کرتی ہیں۔ ایک تحقیق کے مطابق مسلمانوں کا شمار سب سے زیادہ خیراتی مذہبی گروہوں میں ہوتا ہے، جن میں سے تقریبا تین چوتھائی گزشتہ سال خیراتی اداروں میں عطیات دیتے ہیں۔ یہ اعدادوشمار مسلم کمیونٹیز کی سماجی ذمہ داری اور انسانیت کی خدمت کے عزم کی تصدیق کرتے ہیں۔جیسے جیسے عید الاضحی کا تہوار ختم ہو رہا ہوتا ہے، اس تہوار کے پائیدار اسباق کو ہماری روزمرہ کی زندگیوں میں آگے بڑھانا ضروری ہے۔ آئیے ہم اٹل ایمان، بے لوث قربانی، اور ہمدردی کی اہمیت پر غور کریں۔ ہمیں اللہ تعالیٰ پر حضرت ابراہیمؑ کے غیر متزلزل اطاعت کے جذبے کی تقلید کرنے کی کوشش کرنی چاہئے۔ آئیے ہم اپنے آپ کو خدمت اور قربانی کے اصولوں پر دوبارہ عہد کریں۔ آئیے ہم اپنی برادریوں کے اندر بندھن کو مضبوط کریں اور ضرورت مندوں کے لیے مدد کا ہاتھ بڑھائیں۔ اس مقدس تہوار کی روح کو مجسم بنا کر، ہم سب کے لیے ایک زیادہ منصفانہ اور ہمدرد دنیا کی تعمیر میں اپنا حصہ ڈال سکتے ہیں۔
وزیر اعظم شہباز شریف کا عوام سے خطاب
وزیر اعظم شہباز شریف نے ہفتے کے روز اپنی حکومت کی ابتدائی 100 دنوں کی کامیابیوں کو اجاگر کرتے ہوئے معاشی استحکام اور عوامی بہبود کے اپنے پانچ سالہ ایجنڈے کی ترجمانی کی جس میں کرپٹ یا خسارے میں جانے والی وزارتوں اور محکموں کو ختم کرنے، ٹیکس نیٹ کو وسیع کرنے اور ان کے خاتمے کے سخت فیصلوں کی نشاندہی کی۔ وزیراعظم نے قوم سے اپنے پہلے خطاب میں کہا کہ حکومت کی دانشمندانہ اقتصادی پالیسیوں کے نتیجے میں مہنگائی 38 فیصد سے کم ہو کر 12 فیصد، شرح سود 22 فیصد سے کم ہو کر 20 فیصد ہو گئی اور تیل کی قیمتوں میں بار بار کمی کی گئی۔ جمعہ کو پٹرول کی قیمت میں 10.5 روپے فی لیٹر اور ڈیزل کی قیمتوں میں 2.5 روپے فی لیٹر کمی ہم نے مستقبل کے لائحہ عمل کا تعین کیا ہے اور ہم اسے انتہائی ایمانداری اور سختی کے ساتھ آگے بڑھائیں گے۔ ہم ایک ایک پیسہ عوامی فلاح و بہبود پر خرچ کریں گے ہم سرخ فیتہ کا خاتمہ کریں گے یہ سفر نہ صرف مشکل اور طویل ہے بلکہ حکومتی حکام کے ساتھ ساتھ اشرافیہ سے بھی قربانی مانگتا ہے، انہوں نے اپنے ٹیلی ویژن خطاب میں کہا کہ اپریل 2022 میں جب پی ڈی ایم حکومت نے اقتدار سنبھالا تو ملک کی معاشی صورتحال انتہائی خراب تھی اور ملک ڈیفالٹ کے دہانے پر تھا۔ وزیر اعظم شہباز شریف نے نشاندہی کی کہ نواز شریف سمیت اتحادی جماعتوں کے سربراہان کی قیادت میں پی ڈی ایم کی حکومت نے سخت فیصلے کیے اور اپنے سیاسی فائدے کی قیمت پر ملک کو ڈیفالٹ ہونے سے بچایا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہماری گزشتہ دور حکومت میں 16 ماہ اور موجودہ دور حکومت میں 100 دن کی کارکردگی کے نتیجے میں آج پاکستان آہستہ آہستہ بحرانوں سے نکل کر استحکام اور ترقی کی جانب گامزن ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر محنت کریں، ایثار اور قربانی کا جذبہ ہو تو کوئی رکاوٹ نہیں رہے گی، اس حوالے سے بہت ٹھوس فیصلے لے کر آو¿ں گا۔ان کا کہنا تھا کہ حکومت کا فرض ہے کہ شاہانہ اخراجات کا خاتمہ کرے، پی ڈبلیو ڈی کی وزارت زمانے بھر کرپشن میں بدنام شمار ہوتی ہے، اگر 100 ارب روپے کا ترقیاتی فنڈ ہو تو 50 فیصدکرپشن کی نظر ہوجاتے ہیں۔ عوامی خدمت کے لیے قوم پر بوجھ وزارتیں یا ادارے ختم کرنا ناگزیر ہوگیا، جن اداروں کا عوام کی خدمت سے کوئی تعلق نہیں اور کرپشن کا منبع بن چکے ہیں ان کا خاتمہ ضروری ہے، ہماری حکومت کو 100 دن پورے ہوچکے ہیں، اگلے ڈیڑھ سے 2 ماہ میں عوام کے پاس مثبت نتائج لاں گا اور پاکستان پر بوجھ بننے والے تمام اداروں کا خاتمہ کردیا جائے گا اور اس حوالے سے کمیٹی بنادی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماضی میں جھانک کر رونے کا کوئی فائدہ نہیں، ماضی سے سیکھ کر پاکستان کا کھویا ہوا مقام دوبارہ حاصل کرنا ہے، اللہ نے ہمیں بے شمار قدرتی وسائل سے نوازا ہے، عوام کو ملک بھر میں اندرونی کے ساتھ بیرونی سرمایہ کاری نظر آئے گی۔ شہباز شریف نے کہا کہ ہمارے لیے 30 فیصد محصولات زیادہ جمع ہونا خوش آئند ہے، آئندہ سال محصولات کے اہداف دکھنے میں بڑا چیلنج ہیں، لیکن چور بازاری اورکرپشن کا خاتمہ کریں تو مزید کھربوں کے محصولات جمع ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات نے 10 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کا وعدہ کیا ہے، ایس آئی ایف سی کے ذریعے صنعتی، زرعی، آئی ٹی، معدنیات میں سرمایہ کاری ہوگی، ہم بیرونی کے ساتھ ساتھ اندرونی سرمایہ کاری کو بھی یقینی بنائیں گے، آئی ایم ایف کا آخری پروگرام لینے جارہے ہیں، وعدہ کرتا ہوں اپنے اہداف پر کمر کس لی تو اگلا پروگرام آخری ہوگا اور ان شااللہ ترقی کی دوڑ میں ہمسایہ ممالک کو پیچھے چھوڑیں گے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

güvenilir kumar siteleri